Manqabatمنقبت

دامنِ رضا

By October 8, 2020No Comments

دامنِ رضا

نسبتِ اعلیٰ حضرت کی سرفرازیاں …

چٗھو کر مہک اٹھی ہے صَبا ، دامنِ رضا
ہے علم کے گُلوں سے بھرا ، دامنِ رضا

عشقِ رسول مل گیا ، ایماں سنور گیا
جس نے بھی بڑھ کے تھام لیا دامنِ رضا

مہر و مہ و نجوم کھڑے ہیں قطار میں
سب پر لُٹا رہا ہے ضیا دامن رضا

سچوں کے راستے پہ سفر کر رہے ہیں ہم
تھامے ہوئے بفضلِ خدا ، دامنِ رضا

پہنچایا جس نے زیر نشینوں کو اوج پر
ہے آسمانِ عِزّ و عُلا ، دامنِ رضا

بزمِ سخن، قبیلۂ فن، جس کے آگے خم
محرابِ علم و عشق و وفا دامنِ رضا

اعجاز بھی ہے اور سَراپا نیاز بھی
حُسنِ ادب کا راہنما ، دامنِ رضا

یا تو وہ رافضی ہوا ، یا ناصبی بنا
ہاتھوں سے جس کے چھوٹ گیا دامنِ رضا

ہم جس قَدَر بھی ناز کریں کم ہے سُنّیو !
رب العُلٰی نے ہم کو دیا دامنِ رضا

تھاما اسے تو غوث کا فیضان مل گیا
ہے قُرب مصطفیٰ کا پتہ دامنِ رضا

جس سے دلوں کو حُبِّ نبی کی تڑپ ملی
ہے بلبلِ بہشتِ وِلا ، دامنِ رضا

گمراہ کر نہ پائے گا تم کو کبھی کوئ
ہاتھوں میں اپنے رکّھو سدا دامنِ رضا

ہر راہ میں ازالۂ شُبہات کے لئے
ہے آفتابِ صدق و صفا دامنِ رضا

جس کی چمک ہے خانۂ ملت کی آبرو
اللہ کی ہے ایسی عطا دامنِ رضا

ابرِ بہار ساز ، وہ بحرِ چمن نواز
ہے اک جہانِ جود و سخا دامنِ رضا

حیران ہے نگاہِ جہاں جس کو دیکھ کر
مخزن کرامتوں کا بنا ، دامنِ رضا

اس کے قریب آئی نہیں بد عقیدگی
دستِ جگر میں جس نے رکھا دامنِ رضا

اللہ کا کرم ہوا فتنوں سے بچ گیے
ہم کو بھی اے فریدی ! ملا دامنِ رضا

از فریدی صدیقی مصباحی