Skip to main content
نعت

دامنِ آقا کی وسعت اور امانوں پر نثار

By August 30, 2021No Comments

دامنِ آقا کی وسعت اور امانوں پر نثار
گیسوئے جاناں کی ٹھنڈی ٹھنڈی چھاؤں پر نثار

رحمۃ للعلمیں تیری عطاوں پر نثار
حسنِ مطلع جانِ عالم کی صفاتوں پر نثار

اے شفیعِ مرضِ عصیاں اے طبیبِ جسمِ ما
اے حبیبِ ہر جہاں تیری  شفاؤں پر نثار

قلبِ یثرب کو بنائیں آؤ ہم  طیبہ نگر
ذرّئے نعلین لے کر ہو کے تلوں پر نثار

خاکِ طیبہ میں شفا تو آبِ طیبہ ہے دوا
خطۂ سرکار کے رنگین جلووں پر نثار

گھومتی پھرتی بہاریں ہر طرف بہر عطا
دل ربا و دل فدا اُن ہواؤں پر نثار

اللہ اللہ چہرہ و الشمس میں ہیں دو قمر
عرش بھی طالب ہے جن کا ان نگاہوں پر نثار

چاند وہ تلوں سے جس کے جھڑتے ہیں ماہ و نجوم
ہے ہلالِ آسماں ایسے ستاروں پر نثار

جذبہ عشق نبی تم دیکھ لو یرموک میں
خود شہادت دوڑ کر ہوتی ہے یاروں پرنثار

ان کے دشمن کا لہو مرغوب ہے ہم کو بہت
خالدِ سیفِ خدا تیرے جوابوں پر نثار

دشمنانِ مصطفے پر حملہ آور ہیں زبیر
حملۂ شیرِ خدا پر عشق والوں پر نثار

اُن کے آگے حضرتِ حمزہ کی وہ جانبازیاں
تیرے ہیں شیر ببر شیرانہ حملوں پر نثار

پاک جانیں بیچ کر جنت دلائی ہے ہمیں
دافعِ کرب و بلا حسنین زادوں پر نثار

مثلِ کشکولِ فقیراں پھر رہے تھے دربدر
مل گئی منزل ہوئے جب صحرا نشینوں پر نثار

سوئے جنت چل دیئے فاراں سبب بتلا ذرا
ہوچلے ہم تو رضا کے پیارے نغموں پر نثار

Was this article helpful?
YesNo