Skip to main content
نعت

داغِ فرقتِ طیبہ قلب مضمحل جاتا

By September 8, 2021No Comments

داغِ فرقتِ طیبہ قلب مضمحل جاتا

کاش گنبد خضریٰ دیکھنے کو مل جاتا

دم مرا نکل جاتا ان کے آستانے پر

ان کے آستانے کی خاک میں میں مل جاتا

میرے دل سے دھل جاتا داغِ فرقت طیبہ

طیبہ میں فنا ہوکر طیبہ ہی میں مل جاتا

موت لے کے آجاتی زندگی مدینے میں

موت سے گلے مل کر زندگی میں مل جاتا

خلد زارِ طیبہ کا اس طرح سفر ہوتا

پیچھے پیچھے سر جاتا آگے آگے دل جاتا

دل پہ جب کرن پڑتی ان کے سبز گنبد کی

اس کی سبز رنگت سے باغ بن کے کھل جاتا

فرقت مدینہ نے وہ دیئے مجھے صدمے

کوہ پر اگر پڑتے کوہ بھی تو ہل جاتا

دل مرا بچھا ہوتا ان کی رہ گزاروں میں

ان کے نقشِ پا سے یوں مل کے مستقل جاتا

دل پہ وہ قدم رکھتے نقش پا یہ دل بنتا

یا تو خاک پا بن کر پا سے متصل جاتا

وہ خرام فرماتے میرے دیدہ و دل پر

دیدہ میں فدا کرتا صدقے میرا دل جاتا

چشم تر وہاں بہتی دل کا مدعا کہتی

آہ با ادب رہتی مونھ میرا سل جاتا

در پہ دل جھکا ہوتا اذن پاکے پھر بڑھتا

ہر گناہ یاد آتا دل خجِل خجِل جاتا

میرے دل میں بس جاتا جلوہ زار طیبہ کا

داغِ فرقت طیبہ پھول بن کے کھل جاتا

ان کے در پہ اخترؔ کی حسرتیں ہوئیں پوری

سائل درِ اقدس کیسے منفعل جاتا

Leave a Reply