Skip to main content
نعت

حقیقی زندگی کی ابتدا ہوتی ہے مدفن سے

By August 18, 2021No Comments

حقیقی زندگی کی ابتدا ہوتی ہے مدفن سے
نقاب الٹے ہوئے آتا ہے کوئی روئے روشن سے


مدینے میں مرا دل اور دل میں کملی والا ہے
مرا دل کم نہیں رضواں تری جنت کے گلشن سے


یہ کون آیا یہ کون آیا مرا فریاد رس بن کر
دھواں فریاد بن کر اٹھ رہا ہے دل کے گلخن سے


خدا اس کا زمانے کی ہر اک شئے باخدا اس کی
نچھاور ہوگیا جو مصطفیٰﷺ پر اپنے تن من سے


مقدر سے اگر دو گز زمیں طیبہ میں مل جاتی
گلستاں چھوڑدیتا اور باز آتا نشیمن سے


تمہارے بت بنا رکھے ہیں اپنے خانۂ دل میں
نہ جانے کیوں محبت ہے مجھے اس آذری پن سے


یہی سچ ہے کہ چھپنے کی ہر ایک کوشش ہے لاحاصل
نکل آتے ہیں خود جلوسے جہاں چھن چھن کے چلمن سے


ہزاروں زندگی دیکھا کہ استقبال کو آئیں
بجرم عشق جب شمشیر گزری میری گردن سے


مجھے تسلیم ہے آنکھوں سے تم چھپ جاؤ گے لیکن
ذرا یہ تو بتاؤ کیسے نکلو گے میرے من سے


لپک کر رحمتیں آغوش میں لے لیں گی محشر میں
مچل کر جب لپٹ جائےگا عاصی ان کے دامن سے


شکار جلوۂ باطل نگاہیں کب تلک ہوں گی
حجاب نور سرکادے جمال روئے روشن سے


وہ کچھ اس طرح آئے سامنے یکبارگی اخؔتر
نکل بھاگی مرے پیروں کے نیچے سے زمیں سن سے


نظر کا چار ہونا تھا نگاہِ ناز سے اخؔتر
رگوں میں برق سی دوڑی طبیعت ہوگئی جھن سے

Was this article helpful?
YesNo