Skip to main content
نعت

جس نے مشکل میں کبھی تم کو پکارا ہوگا

By August 14, 2021No Comments

   جس نے مشکل میں کبھی تم کو پکارا ہوگا
تم نے فی الفور دیا اس کو سہارا ہوگا

ڈوبتے ڈوبتے کب چاند نے سوچا ہوگا
اس کے چھپنے سے جہاں میں کیا اندھیرا ہوگا

شمع پُر نور بریلی پہ پتنگے ٹوٹے
ہند نے کب بھلا دیکھا یہ نظارا ہوگا

جام نوری نے بنایا انہیں ایسا نوری
روز و شب مرقد نوری پہ اجالا ہوگا

ستر پوشی کو بڑھا ہاتھ سنبھالی چادر
بعد مرنے کے کسے پاس شرع کا ہوگا

میرے مرشد یہ بتاتے ہوئے دنیا سے گئے
وہ ہے زندہ جو مرے یار پہ مرتا ہوگا

روز محشر یہ ہے ریحاؔن عقیدہ اپنا
کہ مِرے پیر کا سر پہ میرے سایہ ہوگا