Skip to main content
نعت

تیرہ بختوں کی ہوگئی معراج

By August 18, 2021No Comments

تیرہ بختوں کی ہوگئی معراج
چرخ پر ہے طلوعِ بدرالدّاج


سبز گنبد میں یوں ہے جلوہ فگن
جیسے اک شمع ہو بہ قصر زجاج


تابش مہر اور جمال سحر
ہیں فقط عکس چہرۂ وہاّج


پیش پرواز شہپر احمد
برق کیا؟ خیرہ ہمدم معراج


کیوں نہ ہو عرش متّکا ان کا
جبکہ وہ فرق مرسلیں کے ہیں تاج


کون آیا ہے رشک مہر و قمر
فرش سے عرش تک ہے نور کا راج


موج باطل کو کردیا پسپا
مٹ گیا بت پرستیوں کا رواج


شادکامی عنادلوں کی نہ پوچھ
آمد نازشِ بہار ہے آج


اپنے بندوں پہ ہو نگاہِ کرم
گلشنِ آس ہوگیا تاراج


روز محشر نبیﷺ نے اے اخؔتر
مجھ گنہگار کی بھی رکھ لی لاج

Was this article helpful?
YesNo