Skip to main content
منقبت

تُو ہے وہ غوث کہ ہر غوث ہے شیدا تیرا

By November 12, 2020No Comments

Tu hay woh Ghaus key har Ghaus hay shaida tera
Tu hay woh ghais key har ghais hay pyaasa tera

Sooraj aglon key chamaktey thay chamak kar doobe
Ufaq e Noor pey hay mehr hamesha tera

Murgh sab boltey hain bol key chup rehte hain
Haan aseel ek nawa sanj rahega tera

Jo wali qabl thay ya ba’d huwe ya hongey
Sab adab rakhte hain dil mein mere Aqaa tera

Baqasam kehtey hain shahaan e sarifeen o hareem
Key hua hay nah wali ho koi hamtaa tera

Tujhsey aur dahar key aqtaab sey nisbat kaisi
Qutub khud kaun hay khaadim tera chelaa tera

Saare aqtaab jahaan karte hain Kaa’be ka tawaaf
Kaa’ba karta hay tawaaf e dar e waala tera

Aur parwaane hain jo hote hain Kaa’be pey nisaar
Shama’a ek tu hay key parwaanah hay Kaa’ba tera

Shajr e sar o sahee kis key ugaaye tere
Maarifat phool sahi kis ka khilaaya tera

Tu hay naushaah baraati hay yeh saara gulzaar
Laayi hay fasl e saman goondh key sehra tera

Daaliyan jhoomti hain raqs e khushi josh pey hay
Bulbulein jhoolti hain gaati hain sehra tera

Geet kaliyon ki chatak ghazlein hazaaron ki chehek
Baagh key saazon mein bajta hay taraana tera

Saf e har shajrah mein hoti hay salaami teri
Shaakhein jhuk jhuk key baja laati hain mujra tera

Kis gulistaan ko nahin fasl —e bahaari sey niyaaz
Kaun sey silsile mein faiz nah aaya tera

Nahin kis chaand ki manzil mein tera jalwa e noor
Nahin kis aaine key ghar mein ujaala tera

Raaj kis sheher mein kartey nahin tere khuddaam
Baaj kis neher sey letaa nahin darya tera

Mazr’ae Chisht o Bukhara o Iraaq o Ajmer
Kaun si kisht pey barsa nahin jhaala tera

Aur mehboob hain haan par sabhi yaksaan to nahin
Yoon to mehboob hay har chaahne wala tera

Is ko sau fard sarapaa ba faraghat oorhein
Tang ho kar jo utarne ko ho neema tera

Gardanein jhuk gayin sar bich gaye dil laut gaye
Kashf e saaq aaj kahaan yeh to qadam tha tera

Taaj e farq e irfaa kis key qadam ko kahiye
Sar jise baaj dein woh paaon hay kiska tera

Sukr key josh mein jo hain woh tujhe kya jaanein
Khidr key hosh sey pooche koi rutba tera

Aadmi apne hi ehwaal pey karta hay qiyaas
Nashe waalon ney bhula sukr nikaala tera

Woh to choota hi kaha chahein key hain zer e hadeed
Aur har auj sey ooncha hay sitarah tera

Dil e aa’da ko Raza tez namak ki dhun hay
Ek zara aur chirakta rahey khaamah tera

AalaHazrat

تُو ہے وہ غوث کہ ہر غوث ہے شیدا تیرا
تُو ہے وہ غیث کہ ہر غیث ہے پیاسا تیرا

سورج اگلوں کے چمکتے تھے چمک کر ڈُوبے
اُفق نور پہ ہے مہر ہمیشہ تیرا

مُرغ سب بولتے ہیں بول کے چُپ رہتے ہیں
ہاں اَصیل ایک نوا سَنْج رہے گا تیرا

جووَلی قبل تھے یا بعد ہوئے یا ہوں گے
سب اَدب رکھتے ہیں دِل میں مِرے آقا تیرا

بقسم کہتے ہیں شاہانِ صریفین و حریم
کہ ہُوا ہے نہ ولی ہو کوئی ہمتا تیرا

تجھ سے اور دَہر کے اقطاب سے نسبت کیسی
قطب خود کون ہے خادم تِرا چیلا تیرا

سارے اقطاب جہاں کرتے ہیں کعبہ کا طواف
کعبہ کرتا ہے طوافِ درِ والا تیرا

اور پروانے ہیں جو ہوتے ہیں کعبہ پہ نثار
شمع اِک تُو ہے کہ پروانہ ہے کعبہ تیرا

شجرِ سرو سہی کِس کے اُگائے تیرے
معرفت پھول سہی کس کا کھِلایا تیرا

تُو ہے نوشاہ بَراتی ہے یہ سارا گلزار
لائی ہے فصل سمن گوندھ کے سہرا تیرا

ڈالیاں جُھومتی ہیں رقصِ خوشی جوش پہ ہے
بلبُلیں جُھولتی ہیں گاتی ہیں سہرا تیرا

گیت کلیوں کی چٹک غزلیں ہزاروں کی چہک
باغ کے سازوں میں بجتا ہے ترانا تیرا

صفِ ہر شجرہ میں ہوتی ہے سلامی تیری
شاخیں جُھک جُھک کے بجا لاتی ہیں مجرا تیرا

کِس گلستاں کو نہیں فصلِ بہاری سے نیاز
کون سے سلسلہ میں فیض نہ آیا تیرا

نہیں کس چاند کی منزل میں تِرا جلوۂ نور
نہیں کس آئینہ کے گھر میں اُجالا تیرا

راج کس شہر میں کرتے نہیں تیرے خدّام
باج کس نہر سے لیتا نہیں دریا تیرا

مزرعِ چِشت و بخاراو عِراق و اجمیر
کون سی کِشت پہ برسا نہیں جھالا تیرا

اور محبوب ہیں، ہاں پر سبھی یکساں تو نہیں
یُوں تو محبوب ہے ہر چاہنے والا تیرا

اس کو سو فرد سراپا بفراغت اوڑھیں
تنگ ہو کر جو اُترنے کو ہو نیما تیرا

گردنیں جھک گئیں سر بچھ گئے دِل لوٹ گئے
کشفِ ساق آج کہاں یہ تو قدم تھا تیرا

تاجِ فرقِ عرفا کِس کے قدم کو کہئے!
سر جسے باج دیں وہ پاؤں ہے کِس کا تیرا

سُکر کے جوش میں جو ہیں وہ تجھے کیا جانیں
خِضر کے ہوش سے پُوچھے کوئی رُتبہ تیرا

آدمی اپنے ہی احوال پہ کرتا ہے قِیاس
نشے والوں نے بھلا سُکر نکالا تیرا

وہ تو چھوٹا ہی کہا چاہیں کہ ہیں زیرِ حضیض
اور ہر اَوج سے اُونچا ہے ستارہ تیرا

دلِ اعدا کو رضاؔ تیز نمک کی دُھن ہے
اِک ذرا اور چھڑکتا رہے خامہ تیرا

اعلی حضرت