Skip to main content

*تو مرا عشق ہے ایمان ہے اے نورِ قدم زار*

مظہرِ ذاتِ خدا مبدءِ تاثیرِ ھَبا قبلہ گہِ اَرض و سما ناظرِ الواحِ قضا قاسم و مختارِ عطا نافئ لَا اے شہِ ابرار

حجّتِ حرفِ رَفَعْنا سے ہوۓ مَا و شُما عجز سراپا ، تری توصیف و ثنا کا کسی صورت نہیں حق ہوتا ادا ، سکتہ میں ہے جنبشِ گفتار

مہرِ ایراد ہوئی ثَبت کُھلے کن کے دَر و بَست عدم بن کے اٹھا ہست یہ تھا یومِ الست ، ایک تحیرّ تھا ہر اِک سَمت ہر اِک روح تھی بے چین

کہیں اعلیٰ تھے کہیں پست ، کہیں نیک و بدِ بخت ، کہیں صاحبِ ہوش اور کہیں مست ، مگر تیرے بلیٰ کہنے پہ موقوف سبھی کا ہوا اِقرار

رحمتِ خاص وہ فرمائی گئی ، بزم سجائی گئی صورت تری دکھلائی گئی ، تا بہ ابد طاقِ دل و دیدہ میں ٹھہرائی گئی تیری ہی تصویر

فرد میثاق کی لائی گئی جو علتِ تخلیق بتائی گئی تو جملۂ آثار و مظاہر تری تصدیق کیے بنتے گئے پرچۂ اَخبار

نغمے مولودِ محمّد کے چِھڑے ، کعبے میں بُت اَوندےگرے ، زلزلے ایواں گہِ کسریٰ میں اٹھے ، رنگ کہ ساوہ کے اڑے ، ہوگئے آتش کدے خاموش

بحرِ نِعمات بہے ، سبزے اُگے ، دشت کِھلے ، ساز بجے ، تذکرے یوں ہونے لگے ، قصے اناجیل میں تورات میں تھے جس کے پڑھے آگیا وہ قاسم و مختار

اللہ اللہ یہ ہدایت یہ اِراءَت یہ اِصالت یہ ِاعانت یہ عنایت ، متلاشئ معارف پہ کھلا عالمِ وحدت کہ مٹا رنگِ کثافت

وہ بڑھی شانِ لطافت نہ رہا قضیۂ وہمیّۂ کثرت ، ترے احکام و اطاعت کی بدولت یوں ہر اک فردِ جماعت پہ کھلے غیب کے اَسرار

حضرتِ زیدِ سَرافراز ، شناساۓ ہمہ راز ، صور ہاۓ خطوطِ حدِ آغاز کا ایسا وہ نظر باز ، ہوا محرمِ ہر خلیۂ تکوین

وجد انداز ، ہوا پیشِ شہِ ازمنہ و حیّزِ کل ناز ، اٹھانے کو حجاباتِ دو عالم ، تو اٹھی ایسے میں آواز کہ رک بندۂ بیدار

شک نہیں اس میں ، کہ فرمانِ شہِ جن و بشر ، میری اِس امت کے سبھی اہلِ نظر ظاہر و باطن کے گہر ، ہیں ورثاۓ رُسُلِ عالمِ ایجاد

ہیں سبھی معتبر و مشتہر و منتثر و مقتدر و مفتخر و منتصر و منفجر و مؤتمر و حلقۂ اشراف میں سب لائقِ دستار

شیشۂ رویتِ مصحف ، تو معرّف ، تو ہے شارح ، ہیں سبھی تیرے مکلّف ، تو مطوّف تو مشرّف تو ہے بے صوت و کَلمِ زاد ہراک جان کا مصرف

چشم مازاغ و ادا ناز ، اے مزلف ہے ہر اِک نطقِ مقفیٰ و مردّف تری مدحت کے تاثّر سے مکیّف تری جانب ہے رخ و سجدۂ افکار

کہیں حسان کہیں ابنِ رواحہ کہیں عباس کہیں ابن اکوع ابن سریع ابن زہیر اور کہیں نابغہ جعدی کا سخن ہوتا ہے بے تاب

کہیں رومی کہیں جامی کہیں عرفی کہیں قدسی کہیں عطار کہیں خسرو و محسن کہیں ہے ذوقِ حسن اور کہیں طرزِ رضا نقشۂ اظہار

تو ہے وہ آیۂ تَنزیل کہ جبریل لیے لہجۂ ترتیل ہوا جاتا ہے تحلیل ترے متنِ حقیقت کی ہو تفصیل یہ ممکن ہی نہیں ہے

نہ ترے جیسی ہوئی کوئی بھی تشکیل نہ تمثیل نہ ہے ہمسرِ تفضیل ، تجھی پر ہوا اتمامِ دلیلِ خطِ تکمیل اے قبلہ گہِ انوار

شانِ لولاک لقب پیکرِ اوصافِ عجب عالی حسب پاک نسب ماہِ عجم مہرِ عرب حسنِ طلب جانِ طرب اے سَبَبِ جملۂ اسباب

صاحبِ اوجِ رُتَب ، نطق بہ لب حلقۂ مخلوق یہ سب ، محوِ ادب ، کہتا ہے اب ، جانِ عطب ہوگئی ہے پیشِ غضب ، ہے کرم آپ کا درکار

ہم نے اوراقِ زمانہ کو پڑھا اور یہ پایا جو کبھی امتوں پر ٹوٹ پڑے قحط و بلا آتی تھیں نبیوں کی طرف بہر دعا و استمداد

تو پھر اے سیدِ اعلیٰ و عُلیٰ منصرفِ حکمِ قضا جانِ عطا روحِ سخا شانِ خدا تیرے درِ ناز سے ہم کیسے سنیں جملۂ انکار

تو بس اب چشمِ کرم مخزنِ ابحارِ نِعَم صاحبِ ہر جاہ و حشم تیری کریمی کی تجھے آج قسم لے کے نہ خالی پھرے یہ کاسۂ خیرات

تو ہے رازیٓ کا بھرم تیرے وسیلے کا بھرے پھرتا ہے دم پشت پناہی پہ تری خامۂ تقدیر یہ کرنے پہ ہے خم دیجیے اجازت اسے سرکار

از : میرزا امجد رازی