Skip to main content
کلامنعت

تو قبلہ گہِ عرصہ گہِ ہست و عدم ہے

By January 24, 2022No Comments

تو قبلہ گہِ عرصہ گہِ ہست و عدم ہے
تو مبدءِ امکان و تجلئ قدم ہے

تو مکتبِ آگاہئ اسرارِ ہویت
تو تاجِ مسانیدِ خطیبانِ حِکم ہے

ہے لا یتجزیٰ ترا ہر جزوِ تکرم
ہر وصف میں تو جوہرِ تفریدِ اتم ہے

جھکتی ہیں ترے سامنے اعناقِ زمانہ
دہلیز تری سجدہ گہِ بابِ حرم ہے

ہر شے پہ ترے پرتوِ انوار کا غلبہ
ہر نقش تری ہیبتِ اجلال پہ خم ہے

واجب ، کہ ترے فوقِ سرِ ذات کا تمغا
ممکن ، کہ ترا تحت برِ گردِ قدم ہے

بس مرتبۂ حضرتِ مطلق میں نہیں دخل
جز اس کے تجھے خلق نے جتنا کہا کم ہے

پہنچا نہ کوئی تیری حدِ مدح پہ اب تک
حیرت میں عرب سربگریبان عجم ہے

کہہ اٹھا ادب زارِ زماں اَوجِ سخن دیکھ
آہنگ بتاتا ہے یہ رازی کا قلم ہے

از : میرزا امجد رازی