Skip to main content

*تضمین بر کلام جامی علیہ الرحمہ*

درود بہ روئے تو اے جان عالم
سلام بہر تار آں زلف پر خم
بہ بزمش رساں اے صبا ایں پیامم
*سلام علیک اے نبئ مکرم*
*مکرم تر از آدام و نسل آدم*

دم مرگ یارب ہو اپنا یہ عالم
کہ پیش نظر ہو وہ محبوب اکرم
سناکر اسے حال دل یوں کہیں ہم
*سلام علیک اے نبئ مکرم*
*مکرم تر از آدم و نسل آدم*

یہی اپنا نالہ ہو جب تک جئیں ہم
یہی پڑھتے پڑھتے الہی مریں ہم
یہی کہتے کہتے لحد سے اٹھیں ہم
*سلام علیک اے نبئ مکرم*
*مکرم تر از آدم و نسل آدم*

جگر پارہ پارہ ہے آنکھیں ہیں پرنم
کوئی دم کا مہماں ہوں آنکھوں میں ہے دم
صدا اب بھی ہر مو سے آتی ہے پیہم
*سلام علیک اے نبئ مکرم*
*مکرم تر از آدم و نسل آدم*

کہاں تک سہیں ہجر کے صدمہ و غم
بلالو مدینے میں اے شاہ عالم
کہ جالی پکڑ کر یہ نالہ کریں ہم
*سلام علیک اے نبئ مکرم*
*مکرم تر از آدم و نسل آدم*

بسی تیری خاطر دو عالم کی بستی
سمک سے سما تک حکومت ہے تیری
یہ حشمت یہ شوکت سنی ہے نہ دیکھی
سلام علیک اے ز آبائے علوی
*بصورت مؤخر بمعنی مقدم*
*سلام علیک اے نبئ مکرم*

دوعالم میں پھیلی ہے جس گل کی نکہت
ہے آفاق میں جس کا شور ملاحت
وہ تو ہی ہے اے مظہر حسن وحدت
سلام علیک اے ز آغاز فطرت
*طفیل وجود تو ایجاد عالم*
*سلام علیک اے نبئ مکرم*


مدینے کے دل بر تجھے جب سے دیکھا
نہیں بھولتا تیرا حسن دل آرا
سما جا ان آنکھوں میں اس دل میں آجا
سلام علیک اے ز اسمائے حسنی
*جمال تو آئینۂ اسم اعظم*
*سلام علیک اے نبئ مکرم*

کہاں تک سناؤں تمنائے خاطر
جو دل پر گزرتی ہے تم پہ ہے ظاہر
تڑپتا رہوں ہجر میں کب تک آخر
سلام علیک اے شناسا بصد سر
*کہ روح الامین در یکے نیست محرم*
*سلام علیک اے نبئ مکرم*

دکھادیجیے خواب میں ہی وہ صورت
سنگھادیجیے اپنے بالوں کی نکہت
دوعالم میں شان رحمت کی شہرت
توئی یارسول اللہ آں بحر رحمت
*کہ باشد محیط از عطائے تو یک نم*
*سلام علیک اے نبئ مکرم*

الہی دکھادے وہ گلزار طیبہ
جہاں کھل رہا ہے وہ رحمت کا لالہ
کہوں اس سے دکھلا کے زخمی کلیجہ
جگر تشنگانیم از رہ رسیدہ
*ترحم علینا بماء ترحم*
*سلام علیک اے نبئ مکرم*

کبھی تو دکھادو بلاکر خدارا
وہ زلفوں کی سج دھج وہ مکھڑے کا جلوہ
کہ ہم جان دے دیں وہیں کرکے نعرہ
*جزاک الذیں عم جودا و برا*
*وارضاک عنا وصلے وسلم*
*سلام علیک اے نبئ مکرم*

*معین* حزیں جب سے دیکھی وہ صورت
ہوئی سرد دل پر دوعالم کی الفت
بنے گی اسی در پہ اب اپنی تربت
کشادیم بار سفر در دیارت
چوں *جامی* زبار گنہ پشتہا خم
*سلام علیک اے نبئ مکرم*

*از قلم*
عاشق رسول نبیرۂ بانئی سلسلۂ فریدیہ شہزادۂ حضور مصلح الدین ڈپٹی کلکٹر علیہ الرحمہ پیر طریقت رہبر راہ شریعت
حضرت علامہ مولانا بابو محمد *معین الدین* قادری مجددی فریدی المعروف *بابو علیہ الرحمہ*
میر گنج شریف بھوجپور آرہ

_مرتبہ :_
خاکپائے اولیاء کرام
محمد شوقین نواز *شوق فریدی*