Salamسلام

تضمین بر سلامِ رضا – نواز اعظمی

By October 14, 2020No Comments

مکمل تضمین بر سلامِ رضا
تضمین نگار : نواز اعظمی مصباحی

(الف)
آفتابِ رسالت پہ لاکھوں سلام
ماہتابِ نبوت پہ لاکھوں سلام
صاحبِ شان و شوکت پہ لاکھوں سلام
مصطفٰی جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام
شمعِ بزمِ ہدایت پہ لاکھوں سلام

(ب)
پیکرِ حلم و رأفت پہ لاکھوں سلام
خوگرِ رحم و شفقت پہ لاکھوں سلام
شاہِ لطف و عنایت پہ لاکھوں سلام
مصطفٰی جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام
شمعِ بزمِ ہدایت پہ لاکھوں سلام

حاملِ اوّلیّت پہ روشن درود
جامعِ ہر فضیلت پہ روشن درود
گوہرِ کانِ رفعت پہ روشن درود
مہرِ چرخِ نبوت پہ روشن درود
گلِ باغِ رسالت پہ لاکھوں سلام

نشر کارِ نِعَم ، آبشارِ کرم
پاسدارِ حشم ، شاہ کارِ اتم
غمگسارِ امم ، ، افتخارِ عجم
شہریارِ ارم ،تاجدارِ حرم
نوبہارِ شفاعت پہ لاکھوں سلام

رہروِ راہِ سدرہ پہ دائم درود
سائرِ عرشِ اعلٰی پہ دائم درود
مشعلِ بزمِ ادنی’ پہ دائم درود
شبِ اسری’ کے دولھا پہ دائم درود
نوشہءِ بزمِ جنت پہ لاکھوں سلام

نیّرِ برجِ عظمت پہ عالی درود
شمعِ بزمِ نبوت پہ نوری درود
کاشفِ تار و ظلمت پہ ماحی درود
عرش کی زیب و زینت پہ عرشی درود
فرش کی طِیب و نزہت پہ لاکھوں سلام

عارفِ ربِّ عزت پہ اعرف درود
رونقِ باغِ خلقت پہ اشرف درود
حسنِ کردار و خصلت پہ انظف درود
نورِ عینِ لطافت پہ الطف درود
زیب و زینِ نظافت پہ لاکھوں سلام

پاکبازِ اتم ، بے نیازِ نِعَم
چارہ سازِ الم ، کارسازِ امم
اعتزازِ عجم ، سرفرازِ حرم
سروِنازِ قِدَم ، مغزِرازِ حِکَم
یَکّہ تازِ فضیلت پہ لاکھوں سلام

وجہِ ایجادِ خلقت پہ یکتا درود
کاشفِ کنزِ غَیبَت پہ یکتا درود
اولِ خلقِ فطرت پہ یکتا درود
نقطہءِ سرِّ وحدت پہ یکتا درود
مرکزِ دورِ کثرت پہ لاکھوں سلام

مالکِ اختیاراتِ ہر خشک و تر
حاکمِ بحر و بر شاہِ جن و بشر
رازِ سربستہءِ کن سے ہیں باخبر
صاحبِ رجعتِ شمس و شق القمر
نائبِ دستِ قدرت پہ لاکھوں سلام

جس کے حق میں خدا نے رفعنا کہا
جس کے سر تاجِ عزّ و شرف ہے سجا
صاحبانِ حکومت ہیں جس کے گدا
جس کے زیرِ لوا آدم و من سوا
اس سزائے سیادت پہ لاکھوں سلام

جس کے آگے خمیدہ ہے سب کی جبیں
جس کے زیرِ تصرف ہیں اہلِ زمیں
جس کو حاصل ہوا نظمِ دنیا و دیں
عرش تا فرش ہے جس کے زیرِ نگیں
اس کی قاہر ریاست پہ لاکھوں سلام

موجبِ کن فکاں، رونقِ ہست و بود
باعثِ ارتفاعِ حجابِ شہود
مصدر و منبعِ بخشش و فضل و جود
اصلِ ہر بود و بہبود تخمِ وجود
قاسمِ کنزِ نعمت پہ لاکھوں سلام

(الف)
زیبِ تاجِ سیادت پہ بے حد درود
افتخارِ امامت پہ بے حد درود
شانِ پیغمبریت پہ بے حد درود
فتحِ بابِ نبوت پہ بے حد درود
ختمِ دورِ رسالت پہ لاکھوں سلام

(ب)
ماہتابِ نبوت پہ بے حد درود
انتخابِ نبوت پہ بے حد درود
مستطابِ نبوت پہ بے حد درود
فتحِ بابِ نبوت پہ بے حد درود
ختمِ دورِ رسالت پہ لاکھوں سلام

حسنِ شہکارِ قدرت پہ نوری درود
شرحِ اسرارِ قدرت پہ نوری درود
لطفِ دیدارِ قدرت پہ نوری درود
شرقِ انوارِ قدرت پہ نوری درود
فتقِ ازہارِ قربت پہ لاکھوں سلام

ذاتِ باری تعالٰی کے عکسِ جمیل
دو جہاں میں نہیں کوئی اُن سا شکیل
آیتِ *إنّما اِس پہ روشن دلیل
بے سہیم و قسیم و عدیل و مثیل
جوہرِ فردِ عزّت پہ لاکھوں سلام

*(إنما أنا بشر مثلکم یوحی’ الیّ الخ)

کشفِ کنزِ مشیت پہ غیبی درود
واقفِ وجہ و علّت پہ غیبی درود
عالمِ کارِ قدرت پہ غیبی درود
سِرِّ غیبِ ہدایت پہ غیبی درود
عطرِ جیبِ نہایت پہ لاکھوں سلام

محوِ دیدارِ قدرت پہ لاکھوں درود
مشعلِ راہِ وحدت پہ لاکھوں درود
آشنائے حقیقت پہ لاکھوں درود
ماہِ لاہوتِ خلوت پہ لاکھوں درود
شاہِ ناسوتِ جلوت پہ لاکھوں سلام

دافعِ ہر غم و ابتلا پر درود
منبعِ لطف و جود و سخا پر درود
ساری خلقت کے حاجت روا پر درود
کنزِ ہر بے کس و بے نوا پر درود
حرزِ ہر رفتہ طاقت پہ لاکھوں سلام

معتبر ،مقتدر، مستند پر درود
عکسِ خلّاق کے خال و خد پر درود
مظہرِ وصف و شانِ صمد پر درود
پرتوِ اسمِ ذاتِ احد پر درود
نسخہءِ جامعیّت پہ لاکھوں سلام

بھیجا کرتا ہے خود ان پہ ایزد درود
رونقِ قلب، تکمیلِ مقصد درود
ان کی ہر ہر ادا پر ہو ازحد درود
مطلعِ ہرسعادت پہ اسعد درود
مقطعِ ہر سیادت پہ لاکھوں سلام

ہے شفاعت پہ حاصل انھیں دسترس
بے بسوں کے ہیں بس، بے کسوں کے ہیں کَس
غم کے ماروں پہ آتا ہے ان کو ترس
خلق کے داد رس سب کے فریاد رس
کہفِ روزِ مصیبت پہ لاکھوں سلام

مجھ سے سرکش کی عزت پہ لاکھوں درود
مجھ سے غمگیں کی فرحت پہ لاکھوں درود
مجھ سے مجرم کی حرمت پہ لاکھوں درود
مجھ سے بے کس کی دولت پہ لاکھوں درود
مجھ سے بے بس کی قوت پہ لاکھوں سلام

محوِ دیدارِ خلّاقِ أرض و سما
رونقِ محفلِ قربتِ کبریا
علت و وجہِ تکوینِ ہست و فنا
شمعِ بزمِ دنی’ ھو میں گم کن انا
شرحِ متنِ ہُوِیّت پہ لاکھوں سلام

ان کی مرضی میں ہی رب کی مرضی ہوئی
پرتوِ ذاتِ باری تعالٰی وہی
ان کی ہر بات وحیِ خدائے جلی
انتہائے دوئی ابتدائے یکی
جمعِ تفریق و کثرت پہ لاکھوں سلام

طلعتِ بعدِ ظلمت پہ انور درود
صحّتِ بعدِ علّت پہ یاور درود
دولتِ بعدِ غربت پہ سرور درود
کثرتِ بعدِ قلت پہ اکثر درود
عزتِ بعدِ ذلت پہ لاکھوں سلام

میرے آقا کی بعثت پہ اولی’ درود
دونوں عالم کی رحمت پہ بالا درود
باعثِ نور و طلعت پہ اجلی’ درود
رب اعلٰی کی نعمت پہ اعلٰی درود
حق تعالٰی کی منّت پہ لاکھوں سلام

غمزدوں کے مسیحا پہ بے حد درود
بے سہاروں کے داتا پہ بے حد درود
ہم مریضوں کے عیسٰی پہ بے حد درود
ہم غریبوں کے آقا پہ بے حد درود
ہم فقیروں کی ثروت پہ لاکھوں سلام

راحتِ جانِ مومن پہ بے حد درود
رحمتِ جانِ مومن پہ بے حد درود
رأفتِ جانِ مومن پہ بے حد درود
فرحتِ جانِ مومن پہ بے حد درود
غیظِ قلبِ ضلالت پہ لاکھوں سلام

موجبِ ہر سبب وہ ہے محبوبِ رب
وجہِ جملہ وجوہاتِ عیش و طرب
باعثِ راحت و فرحتِ جاں بلب
سببِ ہر سبب منتہائے طلب
علتِ جملہ علت پہ لاکھوں سلام

عظمتِ آدمیّت پہ اکبر درود
تابشِ روئے خلقت پہ انور درود
شاہِ ملکِ نبوت پہ سرور درود
مصدرِ مظہریّت پہ اظہر درود
مظہرِ مصدریّت پہ لاکھوں سلام

جس کی خوشبو سے گلیاں مہکنے لگیں
جس کی رونق سے گلزار تازہ رہیں
جس کی رنگت پہ ہر گل فدا ہو اٹھیں
جس کے جلوے سے مرجھائی کلیاں کھلیں
اس گلِ پاک منبت پہ لاکھوں سلام

اصلِ جود و کرم مایئہ مرحمت
نام ان کا ہے سرنامئہ مرحمت
ان کے زیبِ بدن جامئہ مرحمت
قدِّ بے سایہ کے سایئہ مرحمت
ظلِّ ممدودِ رافت پہ لاکھوں سلام

رشکِ صد حور ہے جس کی رعنائیاں
ہر نبی و ولی جس کے ہیں مدح خواں
بلبلِ سدرہ کرتا ہے جس کا بیاں
طائرانِ قُدُس جس کی ہیں قمریاں
اس سہی سرو قامت پہ لاکھوں سلام

دید ہے جس کی در اصل دیدِ خدا
عکسِ حسنِ ازل حسن جس کا ہوا
ذات جس کی ہوئی مظہرِ کبریا
وصف جس کا ہے آئینئہ حق نما
اس خدا ساز طلعت پہ لاکھوں سلام

جس کے نزدیک پیر مغاں خم رہیں
روبرو جس کے خُرد و کلاں خم رہیں
سامنے جس کے سب حکمراں خم رہیں
جس کے آگے سرِ سروراں خم رہیں
اس سرِ تاجِ رفعت پہ لاکھوں سلام

شرحِ واللیل ہے زلفِ شاہِ ہدی’
جس کی بو سے معطر ہے ساری فضا
جو ہے رحمت فزا جو ہوئی لطف زا
وہ کرم کی گھٹا گیسوئے مشک سا
لَکَّئہ ابرِ رأفت پہ لاکھوں سلام

عارضِ شب پہ ہے اس کے صدقے رَمَق
نورِ واللیل سے ہے رخِ صبح فَق
شبِ دیجور میں ہے طلوعِ شَفَق
لیلۃ القدر میں مطلعِ الفجرِ حق
مانگ کی استقامت پہ لاکھوں سلام

ابر برسا کیے گیسوئے پاک سے
ہم کو رحمت ملی شاہِ لولاک سے
پارہءِ قلب سے چشمِ نمناک سے
لخت لختِ دلِ ہر جگر چاک سے
شانہ کرنے کی حالت پہ لاکھوں سلام

(الف)
دوجہاں کی خبر رکھنے والے وہ کان
ہر گھڑی باخبر رہنے والے وہ کان
تنگ ہرگز نہیں ہونے والے وہ کان
دور و نزدیک کے سننے والے وہ کان
کانِ لعلِ کرامت پہ لاکھوں سلام

(ب)
ان کو ماکان اور مایکوں کا ہے گیان
دوجہاں کی خبر رکھتے ہیں وہ ہر آن
کون سی شی ہے جس پر نہیں ان کا دھیان
دور و نزدیک کے سننے والے وہ کان
کانِ لعلِ کرامت پہ لاکھوں سلام

عالمِ غیظ میں تھا ظہورِ جلال
وقتِ غیرت جھلکتا وفورِ جلال
موجزن ان کے رخ میں بحورِ جلال
چشمئہ مِہر میں موجِ نورِ جلال
اس رگِ ہاشمیّت پہ لاکھوں سلام

جس کو حاصل نبوت کا رتبہ رہا
جس کو زیبا سیادت کا عہدہ رہا
جس کو غم اپنی امت کا کھاتا رہا
جس کے ماتھے شفاعت کا سہرا رہا
اس جبینِ سعادت پہ لاکھوں سلام

در و دیوارِ زرنابِ کعبہ جھکی
جن کے آگے تب و تابِ کعبہ جھکی
شوکت و شانِ میزابِ کعبہ جھکی
جن کے سجدے کو محرابِ کعبہ جھکی
ان بھووں کی لطافت پہ لاکھوں سلام

ہم غریبوں پہ وہ سایہ افگن مُژہ
غم کے ماروں پہ وہ سایہ افگن مُژہ
بے سہاروں پہ وہ سایہ افگن مُژہ
ان کی آنکھوں پہ وہ سایہ افگن مُژہ
ظُلَّہءِ قصرِ رحمت پہ لاکھوں سلام

(الف)
بے قراریِ مژگاں پہ برسے درود
غم گساریِ مژگاں پہ برسے درود
نو بَہاریِ مژگاں پہ برسے درود
اشک باریِ مژگاں پہ برسے درود
سِلکِ دُرِّ شفاعت پہ لاکھوں سلام

(ب)
ماحیِ داغِ عصیاں پہ برسے درود
پرتوِ لطفِ یزداں پہ برسے درود
ان کی چشمانِ گریاں پہ برسے درود
اشک باریِ مژگاں پہ برسے درود
سِلکِ دُرِّ شفاعت پہ لاکھوں سلام

دیدِ آقا ہے در اصل دیدِ خدا
حاملِ جلوہ آرائیِ کبریا
ناظرِ ذاتِ خلّاقِ أرض و سما
معنیءِ قد رأی مقصدِ ما طغی’
نرگسِ باغِ قدرت پہ لاکھوں سلام

جوش پر ان کا بحرِ کرم آ گیا
گوہرِ لطف و احساں بہم آ گیا
ساز و سامانِ ناز و نِعَم آگیا
جس طرف اٹھ گئی دم میں دم آگیا
اس نگاہِ عنایت پہ لاکھوں سلام

مقصد و معنیءِ ما طغی’ پر درود
مطلبِ آیہءِ ماغوی’ پر درود
گوہرِ کانِ لطف و عطا پر درود
نیچی آنکھوں کی شرم و حیا پر درود
اونچی بینی کی رفعت پہ لاکھوں سلام

سامنے جن کے روشن دیا ٹمٹمائے
جن سے مہرِ منور بھی چہرہ چھپائے
آیتِ والضحی’ جن کے بارے میں آئے
جن کے آگے چراغِ قمر جھِلملائے
ان عذاروں کی طلعت پہ لاکھوں سلام

ان کے رخ کی نزاکت پہ بے حد درود
عارضِ ذی لطافت پہ بے حد درود
ان کے طرزِ نفاست پہ بے حد درود
ان کے خد کی سُہولت پہ بے حد درود
ان کے قد کی رشاقت پہ لاکھوں سلام

جس سے شمس و قمر منھ چھپانے لگے
جس کے انوار اندھیرے مٹانے لگے
جس سے ظلمت کدے نور پانے لگے
جس سے تاریک دل جگمگانے لگے
اس چمک والی رنگت پہ لاکھوں سلام

ان کے رخ کی ملاحت پہ تاباں درود
عارضِ پاک پر نور افشاں درود
رونقِ روئے آقا پہ رخشاں درود
چاند سے منھ پہ تاباں درخشاں درود
نمک آگیں صباحت پہ لاکھوں سلام

قطرہءِ بارشِ عنبر افزا عرَق
عطر بیزی ہو جس سے ہے ایسا عرَق
مشک سے بھی ہے خوشبو میں اعلٰی عرَق
شبنمِ باغِ حق یعنی رُخ کا عرَق
اس کی سچی براقت پہ لاکھوں سلام

روئے پرنور پر ہے وہ زیبا پھبن
رشکِ صد گلستاں ہے وہ رعنا پھبن
چاند کے قرب میں جیسے ہالا پھبن
خط کی گِردِ دہن وہ دل آرا پھبن
سبزہءِ نہرِ رحمت پہ لاکھوں سلام

جس سے کافور ہو لمحہءِ جاں گُسِل
چین پاتا ہے جس سے دلِ مضمحل
جس سے ہوتا ہے زخمِ جگر مندمِل
ریشِ خوش معتدل مرہمِ ریشِ دل
ہالہءِ ماہِ ندرت پہ لاکھوں سلام

اپنے اندر لیے تازگی پتیاں
پھول جیسی ہیں وہ نرم سی پتیاں
جو بہار آشنا ہیں وہی پتیاں
پتلی پتلی گلِ قدس کی پتیاں
ان لبوں کی نزاکت پہ لاکھوں سلام

جس کے الفاظِ خطبات وحیِ خدا
جس کی آوازِ نغمات وحیِ خدا
جس کے سارے مقالات وحیِ خدا
وہ دہن جس کی ہربات وحیِ خدا
چشمئہ علم و حکمت پہ لاکھوں سلام

مرہمِ زخمِ دل، راحتِ خستہ جاں
جس کے باعث ہو کافور دردِ نہاں
جس کے پڑنے سے ہوجائے شیریں کنواں
جس کے پانی سے شاداب جان و جناں
اس دہن کی طراوت پہ لاکھوں سلام

جو مسیحائے بیمارِ عصیاں بنے
چشمِ بے نور جس سے فروزاں بنے
جو مداوائے دردِ مریضاں بنے
جس سے کھاری کنویں شیرہءِ جاں بنے
اس زلالِ حلاوت پہ لاکھوں سلام

جس کے کہنے سے اشجار چلنے لگیں
جس کے فرمان دونوں جہاں میں چلیں
فُصَحا کی زبانیں جہاں چُپ رہیں
وہ زباں جس کو سب کن کی کنجی کہیں
اس کی نافذ حکومت پہ لاکھوں سلام

(الف)
گفتگو کی لطافت پہ بے حد درود
خوش کلامی کی لذّت پہ بے حد درود
اس زباں کی سلاست پہ بے حد درود
اس کی پیاری فصاحت پہ بے حد درود
اس کی دل کش بلاغت پہ لاکھوں سلام

(ب)
اس کی ساری فصاحت پہ بے حد درود
سب پہ بھاری فصاحت پہ بے حد درود
یادگاری فصاحت پہ بے حد درود
اس کی پیاری فصاحت پہ بے حد درود
اس کی دل کش بلاغت پہ لاکھوں سلام

(الف)
گفتگو کی حلاوت پہ لاکھوں درود
ہم کلامی کی قدرت پہ لاکھوں درود
اس کے لہجے کی ندرت پہ لاکھوں درود
اس کی باتوں کی لذت پہ لاکھوں درود
اس کے خطبے کی ہیبت پہ لاکھوں سلام

(ب)
جس نے حل کردیے عقدہءِ ہست و بود
جس کے طرزِ بیاں سے ہے حق کی نمود
جس کے لب سے جھڑے عنبر و عطر و عود
اس کی باتوں کی لذت پہ لاکھوں درود
اس کے خطبے کی ہیبت پہ لاکھوں سلام

جس کو حاصل ہوا افتخارِ قبول
جس کے دم سے ہے قائم وقارِ قبول
جس کے باعث نہیں انتظارِ قبول
وہ دعا جس کا جوبن بہارِ قبول
اس نسیمِ اجابت پہ لاکھوں سلام

جن کی رونق سے چشمے بہیں نور کے
جن کے جوبن سے بکّے اڑیں نور کے
جن کی تابش سے رستے بنیں نور کے
جن کے گچھے سے لچھے جھڑیں نور کے
ان ستاروں کی نزہت پہ لاکھوں سلام

(الف)
جس کی راحت سے آزردگاں خوش رہیں
جس سے پژمردہ چہرے سبھی کھِل اٹھیں
جس کی خیرات تقسیم ہو پھول میں
جس کی تسکیں سے روتے ہوئے ہنس پڑیں
اس تبسم کی عادت پہ لاکھوں سلام

(ب)
شدتِ رنج ہوتے ہوئے ہنس پڑیں
بسترِ غم پہ سوتے ہوئے ہنس پڑیں
دولتِ لطف کھوتے ہوئے ہنس پڑیں
جس کی تسکیں سے روتے ہوئے ہنس پڑیں
اس تبسم کی عادت پہ لاکھوں سلام

جس میں آباد ہے تازگی کا جہاں
جس کے اندر ہے ذوق و حلاوت نہاں
جس میں ہے لذّت و فرحتِ قلب و جاں
جس میں نہریں ہیں شیر و شکر کی رواں
اس گلے کی نضارت پہ لاکھوں سلام

جن کے آگے ہے خم آسمانِ شرف
ختم جن پر ہوئی داستانِ شرف
جن سے ہے نکہتِ گلستانِ شرف
دوش بر دوش ہے جن سے شانِ شرف
ایسے شانوں کی شوکت پہ لاکھوں سلام

(الف)
نکہتِ گلشنِ قریئہ جان و دل
رونقِ مشعلِ خیمئہ جان و دل
تابشِ روزنِ حجرئہ جان و دل
حجرِ اسودِ کعبئہ جان و دل
یعنی مہرِ نبوت پہ لاکھوں سلام

(ب)
سامنے جس کے شمس و قمر ہیں خجل
جس کو کہیے دوائے دلِ مضمحل
شانئہ مصطفٰی سے جو ہے متصل
حجرِ اسودِ کعبئہ جان و دل
یعنی مہرِ نبوت پہ لاکھوں سلام

ان کے نزدیک یکساں غیاب و ظہور
کچھ نہیں فرق مابینِ نزدیک و دور
ان کو حاصل ہوا کیفِ شرح الصدور
روئے آئینئہ علمِ پشتِ حضور
پشتیِ قصرِ ملت پہ لاکھوں سلام

(الف)
ان کے در پر جو آیا غنی کردیا
ہو نہ پائے تھے لب وا غنی کردیا
جس کو محتاج دیکھا غنی کردیا
ہاتھ جس سمت اٹّھا غنی کردیا
موجِ بحرِ سماحت پہ لاکھوں سلام

(ب)
قابلِ منصبِ خسروی کردیا
لائقِ تخت و تاجِ شہی کردیا
جس پہ ڈالی نگاہیں دَھنی کردیا
ہاتھ جس سمت اٹھا غنی کردیا
موجِ بحرِ سماحت پہ لاکھوں سلام

(ج)
پیکرِ لطف و اکرام و جود و سخا
قاسمِ نعمت و بخششِ کبریا
وہ جہاں ہیں وہیں رحمتوں کی گھٹا
ہاتھ جس سمت اٹھا غنی کردیا
موجِ بحرِ سماحت پہ لاکھوں سلام

(د)
دامنِ مفلس و بے نوا بھر دیا
قطرہ مانگا تو اس نے سمندر دیا
اس نے منگتوں کو بہتر سے بہتر دیا
ہاتھ جس سمت اٹھا غنی کر دیا
موجِ بحرِ سماحت پہ لاکھوں سلام

زور آور کہیں ایسا دیکھا نہیں
کوئی بھی مثل طاقت میں جس کا نہیں
دوجہاں میں وہ کس کا سہارا نہیں
جس کو بارِ دوعالم کی پروا نہیں
ایسے بازو کی قوت پہ لاکھوں سلام

خانئہ اہلِ خوباں کے دونوں ستوں
منزلِ جود و احساں کے دونوں ستوں
قبلئہ حق و ایقاں کے دونوں ستوں
کعبئہ دین و ایماں کے دونوں ستوں
ساعدینِ رسالت پہ لاکھوں سلام

جس سے ہوتا ہے ہر دم ظہورِ کرم
جس سے بہتا ہے آبِ طہورِ کرم
جس کی ہر دھار میں ہے وفورِ کرم
جس کے ہر خط میں ہے موجِ نورِ کرم
اس کفِ بحرِ ہمت پہ لاکھوں سلام

اک اشارے پہ اشجار چلنے لگیں
حکم کے چاند، سورج بھی تابع رہیں
تشنہ لب کی تسلّی کا ساماں کریں
نور کے چشمے لہرائیں دریا بہیں
انگلیوں کی کرامت پہ لاکھوں سلام

غم کے ماروں کو کردیں خوشی سے نہال
قلب سے کھینچ دیں خارِ رنج و ملال
رشکِ مہتاب ہیں ان کے حسن و جمال
عیدِ مشکل کشائی کے چمکے ہلال
ناخنوں کی بِشارت پہ لاکھوں سلام

شمعِ بزمِ رسالت پہ ارفع درود
دفعِ رنج و صعوبت پہ ارفع درود
جمعِ ہر شان و شوکت پہ ارفع درود
رفعِ ذکرِ جلالت پہ ارفع درود
شرحِ صدرِ صدارت پہ لاکھوں سلام

حکمت و آگہی ہے بحالِ زبوں
فہم و ادراک بھی ہے شکارِ جنوں
عقل و دانش پہ طاری ہوا ہے فسوں
دل سمجھ سے ورا ہے مگر یوں کہوں
غنچئہ رازِ وحدت پہ لاکھوں سلام

این و آں مِلک اور جو کی روٹی غذا
کن فکاں مِلک اور جو کی روٹی غذا
آسماں مِلک اور جو کی روٹی غذا
کل جہاں ملک اور جو کی روٹی غذا
اس شکم کی قناعت پہ لاکھوں سلام

بے قراروں کی راحت پہ کھنچ کر بندھی
عاصیوں کی براءت پہ کھنچ کر بندھی
غمزدوں کی مسرّت پہ کھنچ کر بندھی
جو کہ عزمِ شفاعت پہ کھنچ کر بندھی
اس کمر کی حمایت پہ لاکھوں سلام

اصفیا تہہ کریں زانو ان کے حضور
اتقیا تہہ کریں زانو ان کے حضور
اغنیا تہہ کریں زانو ان کے حضور
انبیا تہہ کریں زانو ان کے حضور
زانووں کی وجاہت پہ لاکھوں سلام

ہے چراغِ ہدی’ جس کا نقشِ قدم
جس سے ہیں فیض یاب اہلِ حلّ و حرم
جس سے پائیں سبھی لطف و احساں بہم
ساقِ اصلِ قدم شاخِ نخلِ کرم
شمعِ راہِ اِصابت پہ لاکھوں سلام

خاکِ پائے شہِ بحر و بر کی قسم
گَردِ نعلین ِ خیر البشر کی قسم
ذرہءِ رشکِ شمس و قمر کی قسم
کھائی قرآں نے خاکِ گزر کی قسم
اس کفِ پا کی حرمت پہ لاکھوں سلام

جلوہ آرا ہوا جب حلیمہ کا چاند
جب ہوا ہے نمودار مکّہ کا چاند
جس حسیں لمحے نکلا ہے بطحا کا چاند
جس سہانی گھڑی چمکا طیبہ کا چاند
اس دل افروز ساعت پہ لاکھوں سلام

ایسے سجدہ پہ روزِ ازل سے درود
ان کے سجدہ پہ روزِ ازل سے درود
ہووے سجدہ پہ روزِ ازل سے درود
پہلے سجدہ پہ روزِ ازل سے درود
یادگاری ِ امت پہ لاکھوں سلام

عدل و انصاف شاہِ رسولاں کریں
وہ مراعات ہر اک سے یکساں کریں
شیر خواری میں بھی عقل حیراں کریں
بھائیوں کے لیے ترکِ پستاں کریں
دودھ پیتوں کی نصفت پہ لاکھوں سلام

جس طرف سے بھی سرکار گزرا کئے
خشک باغات بھی لہلہانے لگے
سوکھے تھن دودھ سے بکریوں کے بھرے
ضرعِ شاداب و ہر ضرعِ پُر شِیر سے
بَرَکاتِ رضاعت پہ لاکھوں سلام

بسترِ استراحت پہ صدہا درود
خواب گاہِ نبوت پہ صدہا درود
فرشِ والا کی نسبت پہ صدہا درود
مہدِ والا کی قسمت پہ صدہا درود
بُرجِ ماہِ رسالت پہ لاکھوں سلام

لبِ لعلیں ہیں صد رشکِ لعلِ یمن
ان کی رنگت پہ قرباں گلِ یاسمَن
رخ پہ دریا ہے اک نور کا موجزن
اللہ اللہ وہ بچپنے کی پھبن
اس خدا بھاتی صورت پہ لاکھوں سلام

شاخِ پُرنور کی ارتقا پر درود
گلِ اقدس کی کھُلتی قبا پر درود
مسکراتی کلی کی ادا پر درود
اٹھتے بوٹوں کی نشو و نما پر درود
کھلتے غنچوں کی نکہت پہ لاکھوں سلام

ان کی شائستگی پر ہمیشہ درود
جگ سے بے رغبتی پر ہمیشہ درود
عادتِ فطرتی پر ہمیشہ درود
فضلِ پیدائشی پر ہمیشہ درود
کھیلنے سے کراہت پہ لاکھوں سلام

افضل و اعلیٰ خِلقت پہ عالی درود
سربلندیِ خصلت پہ عالی درود
سرفرازِیِ فطرت پہ عالی درود
اعتلائے جبلّت پہ عالی درود
اعتدالِ طویّت پہ لاکھوں سلام

بے تصنع صفا پر ہزاروں درود
بے نمائش عطا پر ہزاروں درود
بے تامّل سخا پر ہزاروں درود
بے بناوٹ ادا پر ہزاروں درود
بے تکلف ملاحت پہ لاکھوں سلام

اجلی اجلی چمک پر چمکتی درود
بڑھتی بڑھتی دمک پر دمکتی درود
نکھری نکھری جھلک پر جھلکتی درود
بھینی بھینی مہک پر مہکتی درود
پیاری پیاری نفاست پہ لاکھوں سلام

نطق کے حسنِ قدرت پہ سیمیں درود
گفتگو کی ملاحت پہ نمکیں درود
ان کے لہجے کی رنگت پہ رنگیں درود
میٹھی میٹھی عبارت پہ شیریں درود
اچھی اچھی اشارت پہ لاکھوں سلام

پیاری پیاری روش پر کروروں درود
ستھری ستھری روش پر کروروں درود
اچھی اچھی روش پر کروروں درود
سیدھی سیدھی روش پر کروروں درود
سادی سادی طبیعت پہ لاکھوں سلام

ذکرِ غفّار میں یادِ ستار میں
کبھی محوِ عبادت ہوئے غار میں
وادی و دشت میں کُنجِِ کہسار میں
روزِ گرم و شبِ تیرہ و تار میں
کوہ و صحرا کی خلوت پہ لاکھوں سلام

رشک کرنے لگا ہے زمیں پر فلک
ایسی دیکھی کسی نے نہ اب تک جھلک
چاند تاروں نے پائی ہے جس سے چمک
جس کے گھیرے میں ہیں انبیا و ملک
اس جہانگیر بعثت پہ لاکھوں سلام

جہل کے سائے دنیا سے چھٹنے لگے
آئینے زندگی کے چمکنے لگے
نور کے باڑے ہر سمت بٹنے لگے
اندھے شیشے جھلاجھل دمکنے لگے
جلوہ ریزیِ دعوت پہ لاکھوں سلام

ذوقِ سرشاریِ شب پہ بے حد درود
حالتِ زاریِ شب پہ بے حد درود
ان کی کرداریِ شب پہ بے حد درود
لطفِ بیداریِ شب پہ بے حد درود
عالمِ خوابِ راحت پہ لاکھوں سلام

نغمہءِ سازِ فرحت پہ نوری درود
لمحہءِ پُر مسرّت پہ نوری درود
جلوہءِ ذی وجاہت پہ نوری درود
خندہءِ صبحِ عِشرت پہ نوری درود
گریہءِ ابرِ رحمت پہ لاکھوں سلام

لطفِ طبعِ لطافت پہ دائم درود
طرزِ رحم و مروّت پہ دائم درود
روشِ فضل و شفقت پہ دائم درود
نرمیِ خوئے لینت پہ دائم درود
گرمیِ شانِ سطوت پہ لاکھوں سلام

جس کے آگے اٹھی گردنیں جھک گئیں
جس کے آگے قوی گردنیں جھک گئیں
جس کے آگے سبھی گردنیں جھک گئیں
جس کے آگے کھنچی گردنیں جھک گئیں
اس خداداد شوکت پہ لاکھوں سلام

رازِ قوسین کس طرح سمجھے کوئی
جلوہءِ کبریا کیسے دیکھے کوئی
حالِ بزمِ دنی’ کیسے پرکھے کوئی
کس کو دیکھا یہ موسیٰ سے پوچھے کوئی
آنکھ والوں کی ہمت پہ لاکھوں سلام

عشقِ سرکارِ کونین میں ہیں نڈھال
رگِ ایماں میں آیا ہوا ہے ابال
شاہِ کون و مکاں کے لیے ہیں وہ ڈھال
گردِ مہ دستِ انجم میں رخشاں ہلال
بدر کی دفعِ ظلمت پہ لاکھوں سلام

حق کی تنویر سے تھرتھراتی زمیں
قطعِ شمشیر سے تھرتھراتی زمیں
ان کی تاثیر سے تھرتھراتی زمیں
شورِ تکبیر سے تھرتھراتی زمیں
جنبشِ جیشِ نصرت پہ لاکھوں سلام

نغمہءِ سازِ نصرت سے رَن گونجتے
شورِ لشکر سے کوہ و دمن گونجتے
جوشِ ایماں سے ان کے بدن گونجتے
نعرہائے دلیراں سے بَن گونجتے
غُرّشِ کُوسِ جرات پہ لاکھوں سلام

قصرِ باطل کو یکلخت ڈھاتی صدا
لشکرِ کفر میں ڈر بڑھاتی صدا
دھاک قلبِ عدو پر بٹھاتی صدا
وہ چقاقاق خنجر سے آتی صدا
مصطفٰی تیری صولت پہ لاکھوں سلام

(الف)
کافروں سے وہ حمزہ کی جانبازیاں
کوئی دیکھے وہ حمزہ کی جانبازیاں
سب سے بڑھ کے وہ حمزہ کی جانبازیاں
ان کے آگے وہ حمزہ کی جانبازیاں
شیرِ غُرّانِ سَطوت پہ لاکھوں سلام

(ب)
شاہِ کون و مکاں پر فدا کاریاں
ان کے اصحاب کی تیر اندازیاں
اللہ اللہ وہ جوشِ صفِ غازیاں
ان کے آگے وہ حمزہ کی جانبازیاں
شیرِ غُرّانِ سَطوت پہ لاکھوں سلام

ہر بُنِ موئے ابرو پہ لاکھوں درود
عطر آمیز گیسو پہ لاکھوں درود
ان کی مشک افزا خوشبو پہ لاکھوں درود
الغرض ان کے ہر مو پہ لاکھوں درود
ان کی ہر خو و خصلت پہ لاکھوں سلام

ان کی ہر شان و شوکت پہ نامی درود
ان کے ہر اوج و رفعت پہ نامی درود
ان کے ہر جاہ و عظمت پہ نامی درود
ان کے ہر نام و نسبت پہ نامی درود
ان کے ہر وقت و حالت پہ لاکھوں سلام

ہیں معطر گُلِ باغہائے قُدُس
زیبِ تطہیر ،رونق فزائے قُدُس
کون سمجھے مقامِ عُلائے قُدُس
پارہائے صحف غنچہائے قُدُس
اہلِ بیتِ نبوت پہ لاکھوں سلام

جس میں تُخمِ طہارت کے غنچے کھلے
ماءِ صافی سے ہر پھول جس میں اُگے
بوئے تقدیس جس سے ہر اک کو ملے
آبِ تطہیر سے جس میں پودے جمے
اس ریاضِ نجابت پہ لاکھوں سلام

(الف)
پارسائی میں جن کا نہ کوئی نظیر
دید سے جن کی محروم مہرِ منیر
آیتِ اِنَّمَا اس کی جانب مشیر
خونِ خیر الرسل سے ہے جن کا خمیر
ان کی بے لوث طینت پہ لاکھوں سلام

(ب)
رازدارِ سُبُل سے ہے جن کا خمیر
رگِ مولائے کل سے ہے جن کا خمیر
وہ نبوت کے گل سے ہے جن کا خمیر
خونِ خیر الرسل سے ہے جن کا خمیر
ان کی بے لوث طینت پہ لاکھوں سلام

راحتِ قلب و جانِ رسولِ خدا
نورِ بینائیِ صاحبِ ماطغی’
منبعِ اتقا کانِ شرم و حیا
اس بتولِ جگر پارہءِ مصطفٰی
حُجلہ آراءِ عفّت پہ لاکھوں سلام

جس کادیکھا نہ سایا مہ و مِہر نے
کوئی پایا نہ ایسا مہ و مِہر نے
جس سے چہرہ چھپایا مہ و مِہر نے
جس کا آنچل نہ دیکھا مہ و مِہر نے
اس ردائے نزاہت پہ لاکھوں سلام

عابدہ زاہدہ صالحہ عاملہ
راکعہ ساجدہ صائمہ شاکرہ
عالمہ فاضلہ کاملہ راشدہ
سیدہ زاہرہ طیبہ طاہرہ
جانِ احمد کی راحت پہ لاکھوں سلام

(الف)
سبطِ شاہِ ہدی’ سید الاسخیا
ابنِ شیرِ خدا سید الاسخیا
سید الاتقیا سید الاسخیا
حسنِ مجتبٰی سید الاسخیا
راکبِ دوشِ عزت پہ لاکھوں سلام

(ب)
راحتِ قلب و جانِ رسولِ خدا
ہیں قرار و سکونِ علی مرتضیٰ
گوہرِ کانِ اکرام و جود و عطا
حسنِ مجتبٰی سید الاسخیا
راکبِ دوشِ عزت پہ لاکھوں سلام

وہ سراپا کرم وہ مجسم عطا
خوگرِ لطف و انعام و جود و سخا
بخشش و فیض کے گوہرِ بے بہا
اوجِ مہرِ ہدی’ موجِ بحرِ ندی’
روحِ روحِ سخاوت پہ لاکھوں سلام

سب سے بالا کی ان پر کروروں درود
حق تعالٰی کی ان پر کروروں درود
ربِ اعلیٰ کی ان پر کروروں درود
ان کے مولا کی ان پر کروروں درود
ان کے اصحاب و عترت پہ لاکھوں سلام

ہوگئے فیض یابِ زبانِ نبی
میکشِ مئے نابِ زبانِ نبی
شاربِ شیریں آبِ زبانِ نبی
شہدِ خوارِ لعابِ زبانِ نبی
چاشنی گیرِ عصمت پہ لاکھوں سلام

جس نے دی ہم کو تعلیمِ صبر و رضا
جس نے خوں سے جلائی ہے شمعِ ہدی’
جس نے دیں کے لیے گھر کو قرباں کیا
اس شہیدِ بلا شاہِ گُلگُوں قبا
بیکسِ دشتِ غربت پہ لاکھوں سلام

بہرِ اعلائے دینِ نبی جاں بکف
رشکِ لعل و گہر غیرتِ ہر صدف
افتخارِ خلف، تاجدارِ سلف
دُرِّ دُرجِ نجف مہرِ بُرجِ شرف
رنگِ روئے شہادت پہ لاکھوں سلام

(الف)
دین و مذہب کی ہیں ترجمانِ شفیق
کیا بیاں ہو سکے داستانِ شفیق
اللہ اللہ رے خاندانِ شفیق
اہلِ اسلام کی مادرانِ شفیق
بانوانِ طہارت پہ لاکھوں سلام

(ب)
شاہِ کون و مکاں کی سبھی ہیں رفیق
پاکبازی میں ہیں لعل کوئی عقیق
ہیں سراپا ہر اک مہربان و خلیق
اہلِ اسلام کی مادرانِ شفیق
بانوانِ طہارت پہ لاکھوں سلام

شوکت و شانِ بیت الشرف پر درود
عزت و آنِ بیت الشرف پر درود
زیبِ بستانِ بیت الشرف پر درود
جِلَو گِیّانِ بیت الشرف پر درود
پَروگیانِ عفّت پہ لاکھوں سلام

مونس و غمگسارِ شہِ انس و جاں
راحتِ قلب ِ سلطانِ کون و مکاں
ہمدم و چارہ سازِ شہِ این و آں
سیّما پہلی ماں کہفِ امن و اماں
حق گزارِ رفاقت پہ لاکھوں سلام

عظمت و شان و شوکت کی حامل ہوئی
جو رضائے الٰہی کے قابل ہوئی
عزت و منزلت جس کو حاصل ہوئی
عرش سے جس پہ تسلیم نازل ہوئی
اس سرائے سلامت پہ لاکھوں سلام

ہیں خدیجہ مقیمِ مقامِ طرب
جس میں تکلیف ہے اور نہ رنج و تعب
جو ہے مقصود و مطلوبِ اہلِ طلب
منزلٌ مِن قصَب لا نَصَبَ لا صَخَب
ایسے کوشک کی زینت پہ لاکھوں سلام

ہم زبانِ نبی رازدانِ نبی
حسن و زیبائشِ گلستانِ نبی
ہیں وہ تسکین و راحت رسانِ نبی
بنتِ صدّیق آرامِ جانِ نبی
اس حریمِ براءت پہ لاکھوں سلام

(الف)
ابجدِ پارہءِ نور جن کی گواہ
تابشِ بقعہءِ نور جن کی گواہ
ہوگئی آیہءِ نور جن کی گواہ
یعنی ہے سورۂ نور جن کی گواہ
ان کی پرنور صورت پہ لاکھوں سلام

(ب)
طاہرہ عاصمہ ہیں جو بے اشتباہ
جن کی نورانی سیرت ہے صد رشکِ ماہ
جن کی پاکی بیاں کر رہا ہے الہ
یعنی ہے سورۂ نور جن کی گواہ
ان کی بے پرنور صورت پہ لاکھوں سلام

جن کی عظمت کے آگے سبھی سر جھکائیں
جن میں سرکارِ کونین آرام پائیں
بِن بلائے جہاں پر ملائک نہ آئیں
جن میں روح القدُس بے اجازت نہ جائیں
ان سُرادق کی عصمت پہ لاکھوں سلام

(الف)
شوکت و شانِ کاشانئہ اجتہاد
وہ نگہبانِ کاشانئہ اجتہاد
ہیں وہ بُنیانِ کاشانئہ اجتہاد
شمعِ تابانِ کاشانئہ اجتہاد
مفتیِ چار ملت پہ لاکھوں سلام

(ب)
ہیں تفقہ میں وہ قابلِ اعتماد
سائلوں کے لیے ہیں وہ جانِ مراد
اور بھی خوبیاں اس پہ ہیں مستزاد
شمعِ تابانِ کاشانئہ اجتہاد
مفتیِ چار ملت پہ لاکھوں سلام

حق شعارانِ بدر و اُحد پر درود
ذی وقارانِ بدر و اُحد پر درود
شہ سوارانِ بدر و اُحد پر درود
جاں نثارانِ بدر و اُحد پر درود
حق گزارانِ بیعت پہ لاکھوں سلام

جن کو رشد و ہدایت کا تمغہ ملا
صحبتِ مصطفائی کا صدقہ ملا
جاہ و عظمت ملی، اعلیٰ رتبہ ملا
وہ دسوں جن کو جنت کا مژدہ ملا
اس مبارک جماعت پہ لاکھوں سلام

نیک خُو، باخدا، رحم دل ،پارسا
شاہِ زہد و ورَع پیکرِ اتقا
وہ رفیقِ شہنشاہِ بزمِ دنی’
خاص اس سابقِ سیرِ قربِ خدا
اوحدِ کاملیت پہ لاکھوں سلام

افضل الخلق وہ بعد از انبیا
مسند آراءِ اقلیمِ صدق و صفا
یارِ غار و مزارِ رسولِ خدا
سایہءِ مصطفٰی ،مایہءِ اصطفٰے
عزّ و نازِ خلافت پہ لاکھوں سلام

محرمِ عقدہءِ رازدارِ سُبُل
گوہرِ کانِ اصحابِ مولائے کُل
باغِ صدق و یقیں کے ہیں جو تازہ گُل
یعنی اس افضل الخلق بعد الرُسُل
ثانی اثنینِ ہجرت پہ لاکھوں سلام

سید العاشقیں، ارفع الرافعیں
مصلح الصالحيں ،اکمل الکاملیں
افضل الراشدیں ،خسروِ سالکیں
اصدق الصادقیں ،سید المتقیں
چشم و گوشِ وزارت پہ لاکھوں سلام

کردیا جس نے باطل کو زیر و زبر
کفر میں جس سے قائم ہے خوف و خطر
تیغ جس کی ہوئی فارقِ خیر و شر
وہ عمر جس کے اعداء پہ شیدا سقر
اس خدا دوست حضرت پہ لاکھوں سلام

قصرِ اعداءِ دیں جن سے تھرّا اٹھا
خرمنِ کفر و الحاد پر برق زا
اہلِ اسلام کے رہبر و رہنما
فارقِ حق و باطل امام الہدی’
تیغِ مسلولِ شدّت پہ لاکھوں سلام

عارفِ شوکت و عزو شانِ نبی
ناشرِ گفتگو و بیانِ نبی
آشنائے کلامِ لسانِ نبی
ترجمانِ نبی ہمزبانِ نبی
جانِ شانِ عدالت پہ لاکھوں سلام

ہادی و سیدی مرشدی پر درود
ذاکرِ عظمتِ ایزدی پر دورد
شاہِ کونین کے مقتدِی پر درود
زاہدِ مسجدِ احمدی پر درود
دولتِ جیشِ عسرت پہ لاکھوں سلام

بکھرے موتی کو جس نے عطا کی لڑی
منتشر شاہ پارے کو یکجائی دی
جو ہوا اہلِ نورینِ عینِ نبی
درِّ منثور قرآں کی سِلکِ بہی
زوجِ دو نور عفت پہ لاکھوں سلام

راہِ حق کے ہیں جو رہبر و رہنما
مسندِ رشد پر جو ہوئے جلوہ زا
وقتِ رخصت تھے محوِ کلامِ خدا
یعنی عثمان صاحب قمیص ِ ہدی’
حُلّہ پوشِ شہادت پہ لاکھوں سلام

بابِ شہرِ علومِ شہِ مرسلیں
کوئی ان سا شجاعت کا پیکر نہیں
رن میں جب آتے وہ ،کانپ اٹھتی زمیں
مرتضیٰ شیرِ حق اشجع الاشجعیں
ساقیِ شِیر و شربت پہ لاکھوں سلام

حسن و زیبائشِ گلشنِ اِنّمَا
سیّد الاولیا، صاحبِ ھل اتی’
شوکتِ خاندانِ شہِ انبیا
اصلِ نسلِ صفا وجہِ وصلِ خدا
بابِ فصلِ ولایت پہ لاکھوں سلام

ماحیِ و رافعِ اہلِ رَفض و خُروج
حارج و مانعِ اہلِ رَفض و خُروج
قاطع و قامعِ اہلِ رَفض و خُروج
اوّلیں دافعِ اہلِ رَفض و خُروج
چارُمی رکنِ ملت پہ لاکھوں سلام

ان کی آمد سے تھرانے لگتا ہے رَن
کانپ اٹھتا ہے کفّار کا تن بدن
گونج گونج اٹھتے ہیں کوہسار و دمن
شیرِ شمشیرِ زَن شاہِ خیبر شکن
پرتوِ دستِ قدرت پہ لاکھوں سلام

جس سے لرزاں ہیں باطل کے قصر و بروج
کہہ دیا جس نے حرص و ہوی’ کو نہ پوج
جس کے دم سے ملا دینِ حق کو عروج
ماحیِ رفض و تفضیل و نصب و خروج
حامیِ دین و سنت پہ لاکھوں سلام

جاں نثارانِ سلطان و شاہِ عرب
رتبہ و شان سب نے ہے پائی عجب
دیکھے جاتے نہیں ان کے نام و نسب
مومنیں پیشِ فتح و پسِ فتح سب
اہلِ خیر و عدالت پہ لاکھوں سلام

اس کی آنکھیں ہیں صد رشکِ شمس و قمر
اس کے جیسا نہیں کوئی بھی دیدہ ور
اس کا حسنِ نظر غیرتِ ہر بصر
جس مسلماں نے دیکھا انھیں اک نظر
اس نظر کی بصارت پہ لاکھوں سلام

جن کے پیرو پہ رحمت ہے اللہ کی
جن کے ساتھی پہ نصرت ہے اللہ کی
جن کے اعداء پہ ہیبت ہے اللہ کی
جن کے دشمن پہ لعنت ہے اللہ کی
ان سب اہلِ محبت پہ لاکھوں سلام

جن سے سب نے کیا اکتسابِ طہور
جن سے حاصل ہوا جامِ آبِ طہور
جن سے سب کو ملی مئے نابِ طہور
باقیِ ساقیانِ شرابِ طہور
زینِ اہلِ عبادت پہ لاکھوں سلام

جو بھی ہیں آنکھ کے تارے اس شاہ کے
جتنے ہیں بیٹیاں، بیٹے اس شاہ کے
نورِ عینین ہیں جتنے اس شاہ کے
اور جتنے ہیں شہزادے اس شاہ کے
ان سب اہلِ مکانت پہ لاکھوں سلام

ان کی ارفع امامت پہ اعلیٰ درود
ان کی برتر قیادت پہ اعلیٰ درود
ان کی عالی نجابت پہ اعلیٰ درود
ان کی بالا شرافت پہ اعلیٰ درود
ان کی والا سیادت پہ لاکھوں سلام

صاحبِ فہم و ادراک و فکرِ لطیف
واقفِ رمز و اسرارِ شرعِ منیف
یہ ہیں عُقدہ کشایانِ قولِ لفیف
شافعی مالک احمد امام حنیف
چار باغِ امامت پہ لاکھوں سلام

(الف)
کاروانِ ہدایت پہ کامل درود
آسمانِ فضیلت پہ کامل درود
ترجمانِ نبوت پہ کامل درود
کاملانِ طریقت پہ کامل درود
حاملانِ شریعت پہ لاکھوں سلام

(ب)
عاملانِ طریقت پہ کامل درود
واصلانِ طریقت پہ کامل درود
مائلانِ طریقت پہ کامل درود
کاملانِ طریقت پہ کامل درود
حاملانِ شریعت پہ لاکھوں سلام

سرورِ اصفیا سید الاولیا
کانِ زہد و ورَع پیکرِ اتقا
رہروانِ رہِ حق کے ہیں رہنما
غوثِ اعظم امام التُقی’ والنُقی’
جلوہءِ شانِ قدرت پہ لاکھوں سلام

اہلِ حق کے لیے ہیں وہ جانِ مراد
جملہ مخلوق کے واسطے ہیں معاد
ان کے آگے سلاطین ہیں سر نہاد
قطبِ ابدال و ارشاد و رُشد الرَشاد
محیِ دین و ملت پہ لاکھوں سلام

تاجدارِ ولایت پہ بے حد درود
مہرِ چرخِ کرامت پہ بے حد درود
پاسپانِ شریعت پہ بے حد درود
مردِ خیلِ طریقت پہ بے حد درود
فردِ اہلِ حقیقت پہ لاکھوں سلام

جس کے آگے جھکی گردنِ اولیا
جس کے نیچے رہی گردنِ اولیا
رحل جس کی بنی گردنِ اولیا
جس کی منبر ہوئی گردنِ اولیا
اس قدم کی کرامت پہ لاکھوں سلام

جامعِ ہر کمالاتِ پیشینیاں
پرتوِ ذاتِ ساداتِ پیشینیاں
ہیں امینِ روایاتِ پیشینیاں
شاہِ برکات و برکاتِ پیشینیاں
نو بہارِ طریقت پہ لاکھوں سلام

ہیں وہ اپنے زمانے میں فردِ فرید
سالکینِ رہِ حق ہوئے مستفید
سیدھے رستے پہ چلتے ہیں ان کے مرید
سید آلِ محمد امام الرشید
گلِ رَوضِ ریاضت پہ لاکھوں سلام

گلشنِ قادریت کے خوش رنگ پھول
نکہت و رنگِ گلزارِ زہرا بتول
حسن و زیبائشِ بزمِ اہلِ عقول
حضرتِ حمزہ شیرِ خدا و رسول
زینتِ قادریت پہ لاکھوں سلام

رونق و زینت و زیب و حسن و جمال
قلب و روح و رخ و عارض و خدّ و خال
ہنر و حکمت و علم و فضل و کمال
نام و کام و تن و جان و حال و مقال
سب میں اچھے کی صورت پہ لاکھوں سلام

(الف)
مظہرِ دستِ جود و نوالِ رسول
پرتوِ علم و و فضل و کمالِ رسول
عکسِ آئینئہ حال و قالِ رسول
نورِ جاں عطر مجموعہ آلِ رسول
میرے آقائے نعمت پہ لاکھوں سلام

(ب)
صاحبِ تاجِ مارہرہ، آلِ رسول
راحتِ قلبِ رنجیدہ ،آلِ رسول
ظلمتِ شب میں تابندہ، آلِ رسول
نورِ جاں عطر مجموعہ آلِ رسول
میرے آقائے نعمت پہ لاکھوں سلام

ناشرِ شرع و احکامِ رب العباد
ماحیِ کفر و الحاد و شرّ و فساد
جلوہ آراءِ اورنگِ رشد و رشاد
زیبِ سجادہ سجاد نوری نہاد
احمدِ نور طینت پہ لاکھوں سلام

یہ ہر اک مرحلے میں رہیں کامیاب
ہر طرح کی مصیبت سے ہوں بازیاب
بے سبب بے طلب بے سوال و جواب
بے عذاب و عتاب و حساب و کتاب
تا ابد اہلِ سنت پہ لاکھوں سلام

اپنے پیغمبروں کے طفیل اے خدا
ان بہشتی دسوں کے طفیل اے خدا
نیک خو مومنوں کے طفیل اے خدا
تیرے ان دوستوں کے طفیل اے خدا
بندہءِ ننگِ خلقت پہ لاکھوں سلام

سر پہ ان کی دعائیں ہیں سایہ فگن
ان کے نزدیک آئے نہ رنج و محن
ظلمتِ زیست میں ہیں رُوپہلی کرن
میرے استاد، ماں، باپ، بھائی، بہن
اہلِ وُلد و عشیرت پہ لاکھوں سلام

(الف)
کس کا ان کی عنایت میں دعویٰ نہیں
کس کا ان کی سخاوت میں دعویٰ نہیں
صرف میرا ہی شفقت میں دعویٰ نہیں
ایک میرا ہی رحمت میں دعویٰ نہیں
شاہ کی ساری امت پہ لاکھوں سلام

(ب)
کس کا ان کی عنایت میں حصہ نہیں
کس پہ جاری نوازش کا دریا نہیں
کس پہ ابرِ کرم ان کا برسا نہیں
ایک میرا ہی رحمت میں دعویٰ نہیں
شاہ کی ساری امت پہ لاکھوں سلام

(ق)
ان کے آنے کا ہوگا نرالا ہی طَور
ان کے عشّاق دیکھیں گے ان کو بغور
ان کی مدح و ثنا کا چلے گا جو دَور
کاش محشر میں جب ان کی آمد ہو اور
بھیجیں سب ان کی شوکت پہ لاکھوں سلام

(الف)
کائناتِ سخن کا ہے سلطاں رضا
ہے امامِ صفِ نعت گویاں رضا
شمعِ تابانِ بزمِ سخن داں رضا
مجھ سے خدمت کے قدسی کہیں ہاں رضا
مصطفیٰ جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام

(ب)
کشورِ نعت کا ہے وہ فرماں روا
عمر بھر مدحِ سرکار کرتا رہا
ہو نواز اُس گھڑی ساتھ نغمہ سرا
مجھ سے خدمت کے قدسی کہیں ہاں رضا
مصطفیٰ جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام

تضمین نگار: نواز اعظمی
گھوسی مئو (انڈیا)