Skip to main content
نعت

بہ فطرتیکہ ادب گاہِ جوہرِ نَسَبی ست

By August 25, 2021No Comments

بہ فطرتیکہ ادب گاہِ جوہرِ نَسَبی ست
ثنائے اہلِ کرم، جُرمِ مدّعا طلبی ست
بہ دل غمے ز تغافل شعاریت دارم
گماں مَبَرکہ فغانم فغانِ بے سببی ست
چہ آورم خبرے از تجلّئ رُخِ دوست
زکاکلش بہ نگاہم ہجومِ تیرہ شبی ست
نصیبِ اہلِ وِلا ہست رنگہائے نشاط
بگلشن از عجمیم و بہارِ ما عربی ست
کریم اہلِ طلب را مُعّزز انگارد
کہ سر بلندئ موج احترامِ تشنہ لبی ست
چہ شد گر آمدہ بانگِ انا الحق از منصور
کہ قطرہ مدّعیِ ذاتِ خود زیَم نسبی ست
بہ کربلا نِگر اندازِ بے نیازی ہا
کہ آلِ ساقئ کوثر بہ دردِ تشنہ لبی ست
بہ مُصحفِ رخِ اُو چشمِ شوق نگشایم
دراز دستئ مژگاں بجلوہ بے ادبی ست
بدستگاہِ کمالش نصیؔر کس نرسد
ہر آنکہ معتکفِ آستانِ آلِ نبیﷺ ست

Was this article helpful?
YesNo