Skip to main content
نعت

بہشتِ کوچۂ نظر ہے بہارِ نظر

By August 22, 2021No Comments

بہشتِ کوچۂ نظر ہے بہارِ نظر
تِرے نثار میں اے شوق بےقرارِ نظر


تلاشِ جلوۂ نظر ہے شعارِ نظر
ہر اعتبار سے اونچا ہے اعتبارِ نظر


نگاہِ خاطرِ مضطر نواز کے صدقے
مِری طرف بھی اشارہ ہو اے قرارِ نظر


تِری تلاش ہے اے رونقِ دیارِ حبیبﷺ
تِرے بغیر ہے اُجڑا ہوا دیارِ نظر


بہارِ گلشنِ طیبہ بسی ہے آنکھوں میں
ہے رشکِ ہشت بہشتِ بریں کنارِ نظر


تِرا جمالِ شب و صبحِ تابناک ِ حیات
تِرا خیال مہ و مہرِ نور بارِ نظر


اٹھی تو آپ کے دستِ کرم کی سِمت اٹھی
ہے کتنا محکم و مضبوط اختیارِ نظر


ہجومِ نور کا عالم ہے صبحِ شامِ فراق
شعاعِ مہرِ مدینہ میں گم ہے تارِ نظر


وہ بس رہے ہیں نظر میں زہے نصیب اختؔر
یہ سر زمینِ مدینہ ہے یاد یارِ نظر

Was this article helpful?
YesNo