Skip to main content
نعت

باغ دو عالم دم سے تمہارےہے گلزار رسول اللہ

By September 7, 2021No Comments

باغ دو عالم دم سے تمہارےہے گلزار رسول اللہ
کون و مکاں ہیں رخ سے تمہارے پر انوار رسول اللہ

تم ہو حشر کے راج دلارے نور ِالہیٰ عرش کے تارے
نیاموری لگا دو کنارے کھیون ہار رسول اللہ

مولیٰ تم نے ہمارے غم میں شب بھر روکر کی ہیں آہیں
امت پر ہے روز ازل سے کتنا پیار رسول اللہ

بھولی بھیڑیں ہم ہیں تمہاری چار و ں طرف ہیں گرگ شکاری
کوئی نہیں ہے بچانے والا ہوغم خوار رسول اللہ

ہائے نہ کی کچھ ہم نے کمائی لہود لعب میں عمر گنوائی
اب جو گھڑی پرسش کی آئی تم ہو یا رسول اللہ

چاہو بگاڑو یا کہ سنبھالو چاہو ڈباؤ یا کہ نکالو
تم ہو ہمارے مالک و حاکم ہم لاچار رسول اللہ

مولیٰ چشم و قلب میں آجا للہ بخت سیہ چمکا جا
اجڑ بن ہے ہمارے دل کا کر گلزار رسول اللہ

کرکے شفاعت تم بخشاؤدامن ڈھاک کر عیب چھپاؤ
حشر میں اپنا کوئی نہیں ہے حامی کار رسول اللہ

راہ کٹھن اور دور ہے منزل سر پر عصیاں پاؤں ہیں گھائل
ہائے چلیں ہم لے کر کیوں کر یہ انبار رسول اللہ

کھول دو گیسو بر سے رحمت دُھل کر عصیاں پاک ہوامت
چمکے سیہ بختوں کی قسمت شب ہے تاررسول اللہ

ڈوبا ہوا سورج پلٹایا چاند کو ٹکڑے کر کے دکھایا
حکم سے تیرے کر سکے کوئی کب انکار رسول اللہ

چاہو جسے فردوس میں جادو چاہو جیسے دوزخ میں بھیجو
جنت و نار ہیں ملک تمہاری ہو مختار رسول اللہ

خود ہی خدا نے تم کو پڑھایا علم نہ تم سے کوئی چھپایا
رب نے تمہارے کھولے ہیں تم پر سب اسرار رسول اللہ

آج جمیلِ قادری دل سے ذکر اپنے آقا کا کرلے
دور کریں بیشک تیرے سب افکار رسول اللہ

قبالۂ بخشش