Skip to main content
نعت

نہ کیوں والنجم برلب گل کھلیں گلزارِ مکاں میں

By August 20, 2021No Comments

نہ کیوں والنجم برلب گل کھلیں گلزارِ مکاں میں
کہ ہے واللیؔل جلوہ ریزان کے سنبلستاں میں


کچھ ایسا مست و بےخود ہوں خیال کوئے جاناں میں
کہ رکھ چھوڑا ہے گلدستہ ارم کا طاقِ نسیاں میں


لگادی آگ بڑھ کر زندگی کے جیب و داماں میں
جنوں کو ہوش گر آیا تو آیا کوئے جاناں میں


زمانہ کیا دوعالم بھی سما سکتے ہیں انساں میں
کچھ ایسی وسعتیں ہیں اک دلِ مردِ مسلماں میں


ہوائے غیرتِ حق خاکِ ہستی بھی اڑا دے گی
قدم رکھا خرد نے گر کسی کے باغِ عرفاں میں


وہ کی ہے ضوفشانی جلوۂ رخسارِ جاناں نے
پڑی ہے صبح محشر منہ لپیٹے اپنے داماں میں


یہ کس نے گدگدایا ہے نسیم خلد کو یارب
کہ اب تک رقص کرتی ہے مدینے کے گلستاں میں


بتا اے آرزوئے دل کدھر کا قصد رکھتی ہے
کہ طیبہ میری نظروں میں ہے جنت میرے داماں میں


خلیؔل اس در پہ مٹ جاؤ سکونِ زیست کی خاطر
غنیمت ہیں جو دن باقی رہے عمر گریزاں میں

Was this article helpful?
YesNo