نعت

اے پیکرِ جمال توئی سیدِ بشر

By May 28, 2020No Comments

اے پیکرِ جمال توئی سیدِ بشر
اے شاہِ خوش خصال توئی سیدِ بشر

نورِ قدیم نے ہی رکھی تیرے نور میں
ہر خوبئ کمال، توئی سیدِ بشر

ہر دور میں رہی ہیں یہ پاکیزگی پسند
جد تیری، تیری آل، توئی سیدِ بشر

چِھڑتا ہے جب بھی ذکرِ جمالِ شہنشہاں
آتا ہے اک خیال، توئی سیدِ بشر

گرچہ ہر اک عروج کو ہوتا زوال ہے
تجھ کو نہیں زوال، توئی سیدِ بشر

ماضی بھی اور عرصۂ فردا بھی ہے تِرا
قرباں ہے تجھ پہ حال، توئی سیدِ بشر

ہے کون اوجِ حضرتِ انسان؟ تھا جواب
جب مجھ سے تھا سوال، توئی سیدِ بشر

کردارِ نور اے شہِ کون و مکاں تِرا
اس بات پر ہے دال، توئی سیدِ بشر

ازہر سا بے ہنر تِرے اوصاف کیا لکھے
اے عکسِ ذوالجلال ،توئی سیدِ بشر

محمد اویس ازہر مدنی