Skip to main content
نعت

اے صبا تیرا گزر ہو جو مدینہ میں کبھی

By September 8, 2021No Comments

اے صبا تیرا گزر ہو جو مدینہ میں کبھی
جانا اس گنبدِ خضرا میں کہ ہیں جس میں نبیﷺ
ہاتھ سے اپنے پکڑ کر وہ سنہری جالی
عرض کرنا میری جانب سے بصد شوقِ دلی

ہے تمنّا یہ خدا سے کہ رسولِ عربیﷺ
اپنی آنکھوں کو مَلوں آپکی چوکھٹ سے نبیﷺ

عمر ساری تو کٹی لہو ولعب میں آقاﷺ
زندگی کا کوئی لمحہ نہیں اچھا گزرا
سارے اعمال سیہ جرم سے دفتر ہے بھرا
آرزو ہے کے گناہوں کا ہو یوں کفارا

ہے تمنّا یہ خدا سے کہ رسولِ عربیﷺ
اپنی آنکھوں کو مَلوں آپکی چوکھٹ سے نبیﷺ

عرض کرنا کہ کہاں مجھ سا کمینہ گندہ
اور وہ شہر کہاں جس میں ہوں محبوب خداﷺ
ہاں سنا ہے کہ نبھاتے ہیں بروں کو مولا
اس لئے آپ کے دروازے پہ دیتا ہے سدا

ہے تمنّا یہ خدا سے کہ رسولِ عربیﷺ
اپنی آنکھوں کو مَلوں آپکی چوکھٹ سے نبیﷺ

آرزو دل کی ہے جب بند ہو حرکت دل کی
آنکھ پتھرائے مجھے آئے اخیری ہچکی
روح جانے لگے جب چھوڑ کے جسمِ خاکی
جسم طیبہ میں ہو اور جان چلے سوئے نبیﷺ

ہے تمنّا یہ خدا سے کہ رسولِ عربیﷺ
اپنی آنکھوں کو مَلوں آپکی چوکھٹ سے نبیﷺ

نبیﷺ اس کے سوا اور میں کیا عرض کروں
آپ کا ہو کے جیوں آپ کا ہو کر ہی مروں
آپ کے در سے پلا آپ کے در پر ہی مٹوں
جان تم سے ملی تم پر ہی نچھاور کردوں

ہے تمنّا یہ خدا سے کہ رسولِ عربیﷺ
اپنی آنکھوں کو مَلوں آپکی چوکھٹ سے نبیﷺ

گو میسّر نہیں سالکؔ کو حضور بدنی!
روح حاضر ہے مگر مثل اویس قرنی
جسم ہندی ہے مرا جان ہے میری مدنی
یا خدا دُور کسی طرح ہو بُعد مدنی

ہے تمنّا یہ خدا سے کہ رسولِ عربیﷺ
اپنی آنکھوں کو مَلوں آپکی چوکھٹ سے نبیﷺ

Leave a Reply