Skip to main content

دورِ حاضر کے نوجوان نعت گو شاعر ندرت
مفتی محمد معظم سدا معظؔم مدنی کا خوبصورت عمدہ کلام

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اِک وصفِ اُلوہی ہے تری ذات میں مفقود
اے شاہد و مشہود !
ہروصفِ حَسَن اس کے سوا تجھ میں ہے موجود
اے شاہد و مشہود !

گنتی کی حدوں سے ترے اوصاف سوا ہیں
عقلوں سے ورا ہیں
اور دائِرہِ خامۂِ مخلوق ہے محدود
اے شاہد و مشہود

کیا طرفہ تعلق ہے یہاں دونوں کے مابین
حیران ہیں کونین
تو رب کا محمد ہے تو وہ تیرا ہے محمود
اے شاہد و مشہود

پہچان کے بھی تجھ کو نہیں مانے کِتابی
ہے نَصِّ کتابی
تو اپنے کمالات کے باعث ہوا مَحسود
اے شاہد و مشہود

حِکمت ہے کہ پردے میں رہا حسنِ دل آرا
اے شاہ تمہارا
ورنہ تو جہاں مان ہی لیتا تمہیں معبود
اے شاہد و مشہود

_____________________
از✍محمد معظم سدا معظؔم مدنی
حالیہ سکونت : ملتان