Skip to main content
نعت

اے سر و گلستانِ عالم، لاریب تو جانِ عالم ہے

By September 6, 2021No Comments

اے سر و گلستانِ عالم، لاریب تو جانِ عالم ہے
اے بزمِ عقیدت کے دولہا تجھ سے ہی شانِ عالم ہے

جب آپ نہ تھے عالم بھی نہ تھا، خالق اِک کنزِ مخفی تھا
جب آپ آئے عالم یہ ہوا! تو نور ظہوورِ عالم تھا

اے شاہِ زمیں اے شاہِ زماں اے باعثِ خلق کون و مکاں
کس چیز پہ تیرا حکم نہیں تو شاہِ شہانِ عالم ہے

اے مرکز نقطۂ نونِ کُن، تجھ سے ہے محیط کون و مکاں
رحمت کے خطوطِ واصل سے پیوستہ کمانِ عالم ہے

اے مظہرِ اوّل ہرِّ خفی، اے منبعِ آخر، نورِ ہُدٰی
ہے تو ہی پنہاں، اور تو ہی عیاں تجھ سے ہی تو شانِ عالم ہے

ناموس خدائے واحد نے ، توحید کا ڈنکا پیٹ دیا
کعبہ کے بُتوں کے گرنے سے غوغائے بُتانِ عالم ہے

بُستانِ عرب، بستانِ عجم، بُستانِ زمیں، بُستانِ زمن
ریحان و بہار ہر بستاں، تو جان جہانِ عالم ہے

انساں میں مافوقُ الفطرت دیکھی نہ کبھی ایسی قدرت
تم لاکھ بشر اپنے کو کہو، کچھ اور گُمانِ عالم ہے

بندوں پہ نہ ہو کیوں لطف و عطا، دشمن بھی تو صدقہ پاتا ہے
مُسلم کو بچالے خطروں سے ، تو امن و امانِ عالم ہے

ہیں گُنگ زبانیں، عقلیں گُم، ہیبت سے جلالِ مالک کے
اے دیو کے بندے دیکھ ذرا، کون آج زبانِ عالم ہے

وہ آنِ خدا، وہ آنِ خدم، وہ آنِ جہاں، وہ آنِ کرم
بُرہانؔ کی آن و عزّت ہے، وہ ذات جو آنِ عالم ہے