Skip to main content
نعت

اے ربّ نوا ڈال دے دامن میں نئی نعت

By جولائی 9, 2021No Comments

اے ربّ نوا ڈال دے دامن میں نئی نعت
معمورہ احساس کو مہکاتی ہوئی نعت

درکار ہے ٹھہرے ہوۓ جذبات کو مہمیز
یہ کام جو کر پاۓ ہو اب ایسی کوئی نعت

کر دے جو قریں ذاتِ رسولِ دوسرا سے
ہے میری نگاہوں میں وہی نعت بڑی نعت

جب ناقہ قُبا سے تھا مدینے کو روانہ
اس منظرِ پاکیزه سےضو ریز رہی نعت

جلوے تھے جب اس نورِ مجسّم کے ہویدا
اس عہدِ مقدّس کی ہے تصویر گری نعت

حجرے سے وہ سرکار کا مسجد میں نکلنا
اس لمحے میں ہو کاش رچی اور بسی نعت

حنّانہ کو سرکار جو دیتے تھے تسلّی
اس لطف سے آراستہ ہو جائے کوئ نعت

جب زید و بلال آتے تھے آقا کے جلو میں
کچھ دیر تو اس وقت کو ٹھہراۓ کبھی نعت

تائب گلِ تقدیس کھلاتی ہی رہے گی
گلزارِ وطن میں ہے نسیمِ سحری نعت

کلام:
حفیظ تائب