Skip to main content

اے اشرف زمانہ

منقبت درشانِ آفتاب ولایت ، غوثِ زماں ، حضرت سید شاہ مخدوم اشرف جہانگیر سمنانی علیہ الرحمہ کچھوچھہ مقدسہ یوپی انڈیا
======

تیرا نَسَب حُسینی ، سادات ہے گھرانہ، اے اشرفِ زمانہ
“حیدر” ہیں جَدّ امجد ، شاہِ اُمم ہیں نانا، اے اشرفِ زمانہ

ابدال در پہ آئیں ، اَوتاد سر جھکائیں
راہِ صفا کا رہبر، ولیوں نے تم کو مانا، اے اشرفِ زمانہ

ٹھوکر میں تختِ شاہی ، تعمیرِ حق کے راہی
سَیَّاحِ بزم عالَم، فطرت مجاہدانہ، اے اشرف زمانہ

علم و ہنر کا جامہ ، تقویٰ کا ہے عمامہ
“لایَحزَنُوں”سے پایا، کردار غازیانہ، اے اشرفِ زمانہ

سِمناں کے شاہِ عالی ، روحانیت کے والی
مسکن ترا کچھوچھہ ، پَنڈوَہ ہے پیر خانہ، اے اشرفِ زمانہ

محبوب شاہِ جیلاں، “یحییٰ” کے دل کے ارماں
مخدومِ بزمِ عرفاں ، ہستی تری یگانہ، اے اشرفِ زمانہ

بھٹکے ہوؤں کی منزل ، اے ڈوبتوں کے ساحل
ٹالو ہماری مشکل ، دکھ درد ہو روانہ، اے اشرفِ زمانہ

اے قبلہ گاہِ عالَم ، خلقِ خدا کے ہمدم
بزم جہاں میں دائم ، چمکے یہ آستانہ، اے اشرفِ زمانہ

ہر سٗو ہے ظلم و سازش ، ہے آپ سے گزارش
اعداے دیں پہ برسے ، عبرت کا تازیانہ، اے اشرفِ زمانہ

زندہ جگر عطا ہو ، خود دار سر عطا ہو
اونچی نظر عطا ہو ، اور دل بہادرانہ، اے اشرفِ زمانہ

علم و عمل کے خُوگر ، صبر و رضا کے پیکر
تم سے زمانہ سیکھے ، صحرا میں گل کِھلانا، اے اشرفِ زمانہ

آواز جب لگائ ، امداد ہم نے پائ
شاہا تری گدائ ، عزت کا شامیانہ، اے اشرف زمانہ

ملت کے چاند تارے، شیدائ ہیں تمہارے
انوار کا حرم ہے ، تیرا یہ آشیانہ، اے اشرفِ زمانہ

پیدا ہو بھائ چارہ ، اُمت میں پھر دوبارہ
یکجائ کا ہو نعرہ ، مومن ہوں پھر توانا ، اے اشرفِ زمانہ

گلزارِ اشرفیت ، اس کی بہار و رَنگت
دائم رہے سلامت ، یہ فیض کا خزانہ ، اے اشرفِ زمانہ

دارین کا شَرَف ہے ، عزت کا یہ شَغَف ہے
لکھتا رہے فریدی اَسلاف کا ترانہ، اے اشرفِ زمانہ

               =======

از فریدی صدیقی مصباحی مسقط عمان