Skip to main content
منقبت

اے اسیر کربلا زین العباد

By December 29, 2020No Comments

اے اسیر کربلا زین العباد
ہم شبیہ مرتضی زین العباد

دیکھ کر لرزہ تھا زندان دمشق
آپ جیسا پارسا زین العباد

ھے علی ابن حسین ابن علی
نام پیارا آپکا زین العباد

جو اسیری رشک آزادی بنی
اس اسیری میں رہا زین العباد

مخزن زہد و ورع جود و سخا
پیکر صبر و رضا زین العباد

گلشن زہرا کی خوشبو آپ نے
چار سو پھیلا دیا زین العباد

آپکی ہمت کا شاہد قصر شام
جب سنا خطبہ ترا زین العباد

کربلا میں کیاہوا کیسے ہوا
جو سنا تم سے سنا زین العباد

سر شہیدوں کے تھے نیزوں پر بلند
اور میر قافلہ زین العباد

اے حسینی سیدوں کے دادا جان
اے اماموں کے شہا زین العباد

نور کو اپنے غلاموں میں کریم
دیجئے تھوڑی سی جا زین العباد

حضرت علامہ مولانا الشاہ سید نورانی میاں اشرفی الجیلانی حفظہ اللہ