Skip to main content
نعت

اگر چشمِ بصیرت ہو تو ظاہر ہے یہ قرآں سے

By August 23, 2021No Comments

اگر چشمِ بصیرت ہو تو ظاہر ہے یہ قرآں سے
بیاضِ کُن کی رب نے ابتدا کی ہے کس عنواں سے


احاطہ ہو نہیں سکتا کبھی ادراکِ انساں سے
بہت آگے تِری عظمت کی حد ہے حدِّ امکاں سے


نظر مشتاق، دل بیتاب، جاں پُرسوز، نَم آنکھیں
چلا ہوں جانبِ طیبہ نرالے ساز و ساماں سے


مدینے کی بہاریں پھر مدینے کی بہاریں ہیں
بدل دیتی ہیں یہ تقدیر صحرا کی گلستاں سے


فراقِ مصطفیٰﷺ کی رات کیسی جگمگاتی ہے؟
تسلسل آنسوؤں کا کم نہیں جشنِ چراغاں سے


تعالیٰ اللہ اوجِ درس گاہِ سرورِ عالم
فرشتوں کو سبق لیتے ہوئے دیکھا ہے انساں سے


سُرورِ لذتِ حسنِ عمل اس سے کوئی پوچھے
جسے بھی ایک چٹکی مل گئی ان کے نمکداں سے


مدیحِ خاص ممدوحِ ازل خود حق تعالیٰ ہے
ادا وصفِ نبیﷺ کا حق ہو کیا اختؔر ثناخواں سے

Was this article helpful?
YesNo