Skip to main content
نعت

اپنے در پہ جو بلاؤ تو بہت اچھا ہو

By September 8, 2021No Comments

اپنے در پہ جو بلاؤ تو بہت اچھا ہو

میری بگڑی جو بناؤ تو بہت اچھا ہو

قید شیطاں سے چھڑاؤ تو بہت اچھا ہو

مجھ کو اپنا جو بناؤ تو بہت اچھا ہو

گردشِ دور نے پامال کیا مجھ کو حضور

اپنے قدموں میں سلاؤ تو بہت اچھا ہو

یوں تو کہلاتا ہوں بندہ میں تمہارا لیکن

اپنا کہہ کے جو بلاؤ تو بہت اچھا ہو

غمِ پیہم سے یہ بستی مری ویران ہوئی

دل میں اب خود کو بساؤ تو بہت اچھا ہو

کیف اس بادۂ گلنار سے ملتا ہی نہیں

اپنی آنکھوں سے پلاؤ تو بہت اچھا ہو

تم تو مردوں کو جلا دیتے ہو میرے آقا

میرے دل کو بھی جِلاؤ تو بہت اچھا ہو

جس نے شرمندہ کیا مہر و مہ و انجم کو

اک جھلک پھر وہ دکھاؤ تو بہت اچھا ہو

رو چکا یوں تو میں اوروں کے لئے خوب مگر

اپنی الفت میں رلاؤ تو بہت اچھا ہو

یوں نہ اخترؔ کو پھراؤ مرے مولیٰ در در

اپنی چوکھٹ پہ بٹھاؤ تو بہت اچھا ہو

Leave a Reply