Skip to main content
نعت

آغوش میں رحمت کی پہنچوں گر ان کا اشارہ ہوجائے

By August 20, 2021No Comments

آغوش میں رحمت کی پہنچوں گر ان کا اشارہ ہوجائے
مدت سے تڑپتی ہے دل میں پوری یہ تمنا ہوجائے


اے ماہِ عرب پھر مہ کی طرف اک اور اشارہ ہوجائے
پھر کفر کی ظلمت مٹ جائے پھر نور دوبالا ہوجائے


اعمال پہ اپنے غور کیا تو دل میں ہوا اک حشر بپا
ہاں شافع محشر تم چاہو تو دور یہ دھڑکا ہوجائے


اے چشمِ ندامت بہہ کے ذرا امید شفاعت کر پیدا
ہر موج معاصی ممکن ہے رحمت کا سفینہ ہوجائے


ہنگام سجود اے جوشِ جبیں لازم ہیں ادب کے بھی آئیں
سجدوں کی فروانی میں کہیں ہنگامہ نہ برپا ہوجائے


اس ہند سے طیبہ کو جاؤں سر روضۂ اقدس پر رکھوں
سر رکھ کے میں پھر اس وقت اٹھوں جب روح روانہ ہوجائے


اے آتشِ عشقِ روئے منور اور بھڑک کچھ اور بھڑک
یہ جاں ہو رخِ انور پہ فدا اور ان کا نظارا ہوجائے


ہو پاس شریعت بھی کامل اور آن رہے مدہوشوں کی
جب گرد ترے روضے کے پھروں انداز کچھ ایسا ہوجائے


اے بادِ صبا طیبہ جاکر، کہنا کہ خلیؔل خستہ جگر
فرقت میں تڑپتا ہے یکسر ہو حکم تو طیبا ہوجائے

Was this article helpful?
YesNo