Skip to main content

اشکِ پیہم کی میں برسات لگالوں تو چلوں
اپنے دامن سے ہر اک داغ مٹا لوں تو چلوں

چوم لوں چشمِ تصوُّر میں درِ شاہِ اُمم
سبز گنبد کو نگاہوں میں بسا لوں تو چلوں

توڑ دوں جھوٹی اَنا کے سبھی پیمانوں کو
اپنے ہونے کی علامات مٹا لوں تو چلوں

قَصرِ ایماں پہ مسلط ہے مفادات کا جَبر
شہرِ اوہام کے اصنام گرا لوں تو چلوں

جن پہ میلہ سا چراغوں کا لگا رہتا ہے
ہر قدم ان گھنی پلکوں کو بچھا لوں تو چلوں

عجز کے پُھول ہواؤں میں بکھیروں پہلے
مغفرت کا سروسامان اُٹھا لوں تو چلوں

دامنِ عرضِ ہنر چاک ہوا جاتا ہے
خشک ہونٹوں پہ زرِ نعت سجالوں تو چلوں

جان دے دوں سرِ دہلیز پیمبرﷺ میں بھی
راستہ کوئی حضوری کا بنا لوں تو چلوں

سجدۂ شکر بھی واجب ہے مرے ہونٹوں پر
جانبِ شہرِ نبیﷺ نامِ خدا لوں تو چلوں

سامنے شہرِ پیمبرﷺ کی گذر گہ ہَے ریاضؔ
ذرّے ذرّے کو مَیں آنکھوں سے لگالوں تو چلوں

شوق دامن کو نہیں چھوڑتا لیکن مَیں ریاضؔ
تشنگی حرفِ ستائس کی بجھا لوں تو چلوں

❣️ریاض حسین چودھری رَحْمَۃُاللہ عَلَیْہ❣️