Skip to main content
نعت

احمد کی رِضا خالقِ عالم کی رِضا ہے

By September 7, 2021No Comments

احمد کی رِضا خالقِ عالم کی رِضا ہے
مرضی ِخدا مرضیِ شاہ دوسرا ہے

ہوتا ہے فَتَرْضٰ کے اشارات سے ظاہر
مرضی ِخدا وہ ہے جو احمد کی رِضا ہے

اَعدائے رِضا جوئے نبی ہوتے ہیں رسوا
اور ان کے غلاموں کا دو عالم میں بھلا ہے

چاہے جو رضا ان کی خدا اس سے ہے راضی
طالب جو رضا کانہیں مردودِ خدا ہے

محبوب الہٰی سے تمہیں بغض و عداوت
اے دشمنو اللہ کے گھر اس کی سزا ہے

اللہ کسی کی نہ ہو قسمت کا بُرایوں
جس طرح کہ اَعدائےسیہ روکا بُرا ہے

اچھے کا جو اچھا ہے خدا کا ہے وہ اچھا
اچھوں سے جو پھر جائے بروں سے وہ برا ہے

احمد کو دیا فضل خدائے دو جہاں نے
ہاں اس کی رضا خالق عالم کی رضا ہے

حامد کی رضا احمد و محمود کی مرضی
وہ چاہے کہ منظور جسے حق کی رضا ہے

واللہ کہ بندہ ہوں میں احمد کی رضا کا
یہ نام مبارک مری آنکھوں کی ضیا ہے

اعدا کے مٹائے سے مٹے کب تری عزت
اللہ تعالیٰ نے تجھے فضل دیا ہے

ایمان کی یہ ہے کہ ترا قول ہے ایماں
اور قول ترا وہ ہے جو فرمان خدا ہے

ہر ملک میں جاری ہے ترے نام کا سکہ
اور کیوں نہ ہو حق نے تجھے سلطان کیا ہے

اللہ کا بندہ ہے ترا تا نابع فرماں
حق سے وہ پھرا جو کہ ترے در سے پھرا ہے

اَعدائے لعیں ظلم و ستم کرتے ہیں ہر دم
اور حِلم ترا یہ کہ تو مصروف ِدعا ہے

رکھتا ہے سدا اپنے غلاموں کو تو منصور
یاشاہ مدینہ تری کیا خوب عطا ہے

جو چاہے جمیل رضوی کو تو عطا کر
مختار ہے تو اور وہ راضی برضا ہے

قبالۂ بخشش

Leave a Reply