Skip to main content
نعت

آج کچھ حد سے فزوں سوز نہانی ہے حضورﷺ

By August 18, 2021No Comments

آج کچھ حد سے فزوں سوز نہانی ہے حضورﷺ
مضمحل میری طبیعت کی روانی ہے حضورﷺ


تیرے ہاتھوں میں مِرے ناز غلامی کی ہے لاج
بے لئے در سے نہ اٹھوں گا یہ ٹھانی ہے حضورﷺ


تیرا کہلانے کے لائق میں نہیں ہوں نہ سہی
میری نسبت تری چوکھٹ سے پرانی ہے حضورﷺ


خود سے آتا ہے یہاں کون؟ یہ میرا آنا
آپ کی چشم عنایت کی نشانی ہے حضورﷺ


آنسوؤں کو مرے دامن کا کنارہ دے دو
اس میں مضمر مری پر درد کہانی ہے حضورﷺ


آپ سے شرح تمنا کی ضرورت کیا ہے؟
سامنے آپ کے ہرسرٌ نہانی ہے حضورﷺ


در پہ لایا ہوں گرفتار خدارا کرلو
نفس بد میرا بڑا دشمن جانی ہے حضورﷺ


قطرۂ اشک کویہ اوج ترے در سے ملا
قطرۂ اشک نہیں درّیمانی ہے حضورﷺ


میرے اعمال پہ للّلہ نہ مجھ کو چھوڑو
آپ ہی کو مری تقدیر بنانی ہے حضورﷺ


کھو نہ جاؤں میں خیالات کی تاریکی میں
نور کی شمع مرے دل میں جلانی ہے حضورﷺ


اپنے اخؔتر کی سنو گے یہ سبھی کہتے ہیں
آبرو میری غلامی کی بچانی ہے حضورﷺ

Was this article helpful?
YesNo