Skip to main content
نعت

آئیے تسکینِ جانِ زار کی باتیں کریں

By August 23, 2021No Comments

آئیے تسکینِ جانِ زار کی باتیں کریں
سرورِ دیں سیدِ ابرارﷺ کی باتیں کریں


ہو رہی ہیں بادلوں سے چاند کی اٹکھیلیاں
ہم بھی ان کے کاکل درخسار کی باتیں کریں


ہوش آجائے نہ پھر میرے جنونِ شوق کو
چارہ گر طیبہ کے صحرا زار کی باتیں کریں


گوشِ نازک سے ہے یوں زلفِ نبیﷺ کا اتصال
دو حسِیں جیسے بہم اسرار کی باتیں کریں


بلبلیں گل کی، چمن کی گفتگو کرتی رہیں
ہم محمّدﷺ کے لب و رخسار کی باتیں کریں


اوج پر ہے ان کے دیوانے کی شوریدہ سری
آپ طیبہ کے درو دیوار کی باتیں کریں


ہم تو اختؔر یوسفِ طیبہ کے ہاتھوں بِک چکے
کرنے والے مصر کے بازار کی باتیں کریں

Was this article helpful?
YesNo