LyricsManqabatUrdu Naat

پروانے کو چراغ ہے ، بلبل کو پھول بس​ صدیق کے لئے ہے خدا کا رسول بس​

By February 23, 2019 No Comments

اِک دن رسولِ پاک نے اصحاب سے کہا​
دیں مال راہِ حق میں جو ہوں تم میں مالدار​

ارشاد سن کے فرطِ طرب سے عمر اٹھے​
اس روز انکے پاس تھے درہم کئی ہزار​

دل میں یہ کہہ رہے تھے کہ صدیق سے ضرور​
بڑھ کر رکھے گا آج قدم میرا راہوار​

لائے غرض کہ مال رسولِ امیں کے پاس​
ایثار کی ہے دست نگر ابتدائے کار​

پوچھا حضور وسرورِ عالم نے ، اے عمر !​
اے وہ کہ جوشِ حق سے ترے دل کو ہے قرار​

رکھا ہے کچھ عیال کی خاطر بھی تو نے کیا؟​
مسلم ہے اپنے خویش و اقارب کا حق گذار​

کی عرض نصف مال ہے فرزند و زن کا حق​
باقی جو ہے وہ ملتِ بیضا پہ ہے نثار​

اتنے میں وہ رفیقِ نبوت بھی آگیا​
جس سے بنائے عشق و محبت ہے استوار​

لے آیا اپنے ساتھ وہ مردِ وفا سرشت​
ہر چیز، جس سے چشمِ جہاں میں ہو اعتبار​

مِلکِ یمین و درہم و دینار و رخت و جنس​
اسپِ قمر، سم و شتر و قاطر و حمار​

بولے حضور، چاہئے فکرِ عیال بھی۔​
کہنے لگا وہ عشق و محبت کا رازدار​

اے تجھ سے دیدۂ مہ و انجم فروغ گیر​
اے تیری ذات باعثِ تکوینِ روزگار​

پروانے کو چراغ ہے ، بلبل کو پھول بس​
صدیق کے لئے ہے خدا کا رسول بس!​

صلی اللہ علیہ واٰلہ وسلم​


علامہ اقبال​